آسام کے بوڈو لینڈ یونیورسٹی میں مسلمانوں کو مجرم کے طور پر پیش کرنے کی کوشش۔۔۔ریاست بھر میں احتجاج جاری۔حکومت خاموش

0
147

کلکتہ :انصاف نیوز آن لائن

آسام کے کوکراجھاڑ میں بوڈولینڈ یونیورسٹی کے شعبہ جغرافیہ کے زیر اہتمام ثقافتی جلوس میں مسلمانوں کو مجرموں کے طور پر پیش کیے جانے کے بعد ریاست بھر میں احتجاج شروع ہوگئے ہیں اور کارروائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ طلبا یونین نے اس معاملے میں جو وضاحت پیش کی ہے وہ کسی بھی صورت میں قابل قبول نہیں ہے اور ان کے بیانات ناکافی ہیں ۔


ریاست کی مختلف تنظیموں نے بوڈولینڈ یونیورسٹی میں طلبا کی ایک ثقافتی ریلی میں مسلمانوں کے لباس میں ملبوس چندافراد پولس کے ذریعہ گرفتار کرکے لے جاتے ہوئے دیکھایا گیا ہے۔آل بی ٹی آر میناریٹی اسٹوڈنٹس یونین (اے بی ایم ایس یو)، آل آسام میناریٹی اسٹوڈنٹس یونین ( اے بی ایم ایس یو) اور نارتھ ایسٹ میناریٹی اسٹوڈنٹس یونین ( این ای ایم ایس یو) نے اس معاملے میں بوڈولینڈ یونیورسٹی (بی یو) کے وائس چانسلر ڈاکٹر بابولال آہوجاسے ملاقات کرکے میمورنڈم سونپتے ہوئے واقعے کی مکمل تحقیقات اور ملوث افراد کے خلاف تادیبی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔

یہ واقعہ 16 مارچ کو پیش آیا جہاں یونیورسٹی کے 23 ویں یونیورسٹی ہفتہ اور تھولنگا فیسٹیول کے دوران بوڈو لیجنڈری ہیروز کے جشن کے طور پر ایک ثقافتی پروگرام منعقد کیا گیا تھا۔ تاہم، ایک وائرل ویڈیو میں ایک اسٹیج ایکٹ دکھایا گیا جس میں دو افراد مسلم لباس میں ملبوس ہیں، ان دونوں کے پاس داڑھی اور سرپر ٹوپیاں ہیںاور ان کے ہاتھ میں ہتھ کڑی ہےمبینہ طور پر وہ پولیس کے لباس میں ملبوس ایک شخص کے پیچھے ریلی میں چل رہے تھے۔ ریلی کی ویڈیوز میں وردی میں ملبوس دو افراد کو پولیس اہلکاروں کے ہاتھوں مارتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

ایک خصوصی ٹیلی فونک انٹرویو میں، سول رائٹس پروٹیکشن کمیٹی (CRPC) کے وائس چیئرمین اور سابق پروفیسر تعز الدین احمد نے کہا کہ یہ ایک ریہرسل تھی اور لوگوں کو چوکنا رہنے کی تنبیہ کی جارہی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ اقلیتی برادریوں پر حملے ہوئے اور فسادات ہونے کے بعد پہلے بھی 1993، 1994، 2008، 2012 اور 2014 سے ریہرسل ہوچکی ہے ۔انہوں نے کہاکہ ثقافتی ریلی میں مسلمانوں کو ایک مجرم برادری کے طور پر پیش کیا گیا، جو کہ انتہائی قابل مذمت ہے اور ایک اعلیٰ تعلیمی ادارے میں نہیں ہونا چاہیے۔’یونیورسٹی انتظامیہ کے تعاون کے بغیر یونیورسٹی کیمپس میں ایسی قابل اعتراض حرکت کا ارتکاب ممکن نہیں۔‘‘ میں چاہتا ہوں کہ یونیورسٹی کیمپس میں بڑھتے ہوئے فرقہ وارانہ ماحول کو کم کیا جائے اور اس کے بجائے یونیورسٹی کو فکر اور اظہار کی آزادی کے ساتھ تعلیمی نصاب پر توجہ دینی چاہیے۔

فورم فار سوشل ہارمنی کے چیف کنوینر ہرکمار گوسوامی نےحکومت پر الزام لگاتے ہوئے کہاکہ یہ واقعہ اس کا حصہ ہے جس طرح حکمراں گروپ چاروں طرف نفرت پھیلا رہا ہے۔ ان کی خاموشی نے واضح کر دیا کہ وہ کیا چاہتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہاکہ اس بات کا خیال رکھا جانا چاہیے کہ سیاسی سازشوں کا شکار ہو کر یہ نفرتیں BTR (بوڈولینڈ ٹیریٹورل ریجن) یا آسام میں دوبارہ نہ پھیلیں۔ اس کے ساتھ ہی لوگوں کو فاشزم کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنا چاہیے، جو نفرت کا ماحول بنا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’’یونیورسٹی جیسے اہم ادارے کو فرقہ پرست طاقتوں کے ذریعہ کسی بھی طرح سے سمجھوتہ کرنے کی اجازت نہیں دی جاسکتی‘‘۔ اس قابل مذمت واقعہ کی تحقیقات ہونی چاہئیں۔

اس کے برعکس، پروفیسر ڈاکٹر رتوراج کلیتا نےبتایاکہ بوڈولینڈ یونیورسٹی کے ثقافتی جلوس میں مسلمانوں کی شبیہ کو بگاڑنے اور مجرم کے طور پر پیش کئے جانے کی مذمت کرنا کافی نہیں ہے! فطری طور پر ذہن میں یہ سوال پید ہوتا ہے کہ اس خوبصورت آسام کو کس نے اور کیسے جہنم میں بدل دیا؟

ادھر یونیورسٹی کی طلبہ یونین نے واقعے کے بعد معافی مانگ لی ہے۔ انہوں نے دعویٰ کیا ہے کہ ریلی مختلف سماجی حقائق کو ’’ہم اور ہمارا معاشرہ‘‘ کے تھیم کے تحت پیش کرنا تھا اور اس کا مقصد کسی کو نقصان پہنچانا نہیں تھا۔ پریس ریلیز میں کہا گیا کہ ہم اس بات پر زور دیتے ہیں کہ کسی بھی کمیونٹی کو پسماندہ کرنے یا اس کی تذلیل کرنے کا کوئی ارادہ نہیں تھا۔ ہمارا بنیادی مقصد موجودہ سماجی منظر نامے کی عکاسی کرنا تھا، قطع نظر کسی بھی کمیونٹی سے وابستگی کے۔

تاہم مظاہرین کا کہنا ہے کہ یہ کافی نہیں ہے۔ آل آسام مینارٹی اسٹوڈنٹس یونین (اے اے ایم ایس یو) کے بی ٹی آر سیکٹر کے لیڈر زاہد احمد نے فون پر بات کرتے ہوئے کہاکہ ’’یہ کسی ثقافتی پروگرام کا حصہ نہیں ہے، اس کا مقصد صرف ایک مخصوص کمیونٹی کو بدنام کرنا ہے۔‘‘ AAMSU کی مرکزی کمیٹی نے مبینہ طور پر یونیورسٹی انتظامیہ سے ملاقات کی اور کچھ مطالبات کے ساتھ ایک میمورنڈم پیش کیا جس میں کہا گیا ہےکہ ہم نے ان مجرموں کے ساتھ معاملے کی مناسب تحقیقات کا مطالبہ کیا۔ طالب علم ہو یا اس سے وابستہ پروفیسر، ان کے خلاف تفتیش ضروری ہے۔موجودہ سیاسی منظر نامے کے بارے میں پوچھے جانے پر اور کیا یہ واقعہ اس کا حصہ ہے، انہوں نے اس کی تصدیق کرتے ہوئے کہا، ’’بلاشبہ یہ نفرت کا حصہ ہے جو پورے ہندوستان میں پھیل رہی ہے۔ ہمیں شبہ ہے کہ اس کے پیچھے کوئی سیاسی سازش ہے۔انہوں نے یہ بھی اظہار کیا کہ طلباء تنظیم کی وضاحت تسلی بخش نہیں ہے کیونکہ ان کے مطابق انہیں اس فعل پر افسوس نہیں ہے۔

آل بی ٹی آر مینارٹی اسٹوڈنٹس یونین (اے بی ایم ایس یو) کے صدر تیسن حسین نے اس واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے کہاکہ ہم نے وائس چانسلر سے ملاقات کی ہے انہوںں نے مناسب تحقیقات کی یقین دہانی کرائی ہے۔ یہ واقعہ واضح طور پر ہندوستانی آئین کے آرٹیکل 153 کی خلاف ورزی کرتا ہے۔ اور معاشرے کو مذہب کے نام پر تقسیم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

آسام پردیش کانگریس کے کوکراجھاڑ ضلع تنظیم کے جنرل سکریٹری، خیر الاسلام (بوبو) نے بتایاکہ یہ مسلم کمیونٹی کو دھوکہ دینے کی کارروائی ہے۔ مختلف گروپوں کی جانب سے متعدد شکایات کے باوجود ملزمان کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔ انہوں نے موجودہ یو پی پی ایل پر الزام لگایا جو بی ٹی آر حکومت چلانے والی بی جے پی کے ساتھ اتحاد میں ہے، اس نے اس ہولناک حرکت پر کوئی کارروائی نہیں کی۔ انہوں نے مزید کہاکہ علاقائی پارٹیاں جیسے یو پی پی ایل (یونائیٹڈ پیپلز پارٹی لبرل) جو بی ٹی آر کو بی جے پی کے ساتھ چلا رہی ہے، نے ابھی تک اس کے خلاف بات نہیں کی ہے۔

16مارچ کو پیش آنے والے واقعات کے بعد سے آج تک حکومت کوئی کارروائی کرنے میں ناکام رہی ہے۔انہوں نے مزید کہاکہ برہمانند بسوماتری، جس نے اس خوفناک کارروائی کا ارتکاب کیا، آل بوڈو اسٹوڈنٹس یونین (ABSU) کا کارکن ہے، جو کہ UPPL کے تعاون سے BTR علاقے میں ایک طلبہ یونین ہے۔ ہم نے دیکھا ہے کہ ABSU نے ہر الیکشن میں UPPL کی مدد کی ہے اور اب بھی UPPL سیاسی پارٹی کے طلبا ونگ کی طرح کام کرتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا، “بی جے پی اور یو پی پی ایل حکومت فرقہ وارانہ انتشار پیدا کرنے اور اپنے سیاسی فائدے کے لیے اپنی تقسیم اور حکومت کی پالیسی کو نافذ کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔”