Friday, April 12, 2024
homeدنیاکیا برطانوی تاجپوشی میں وزیراعظم کی شرکت ہوگی؟

کیا برطانوی تاجپوشی میں وزیراعظم کی شرکت ہوگی؟

سعید نقوی، نئی دہلی

ممکن ہے کہ 200سال کے نو آبادیاتی تجربے نے ہمیں برطانوی بادشاہت کی چمک دمک کوزیادہ قبول کرنے کی صورتحال پیدا کی ہولیکن برطانوی تجربہ ہمارے اس طرح پھنسنے کی واحد وجہ نہیں ہوسکتا۔ جاگیردارانہ نظام کے ساتھ ہمارے طویل تجربے کا اس سے کچھ لینا دینا ہوسکتا ہے۔ بادشاہ، مہاراجہ، مہارانی، راجہ، نواب جنہوں نے دوصدیوں تک ملکہ کے آباؤ اجداد کا احترام کیا۔ دوسرے الفاظ میں ملکہ اس درجہ بندی کو آگے بڑھاتی ہیں جس میں ہم اس وقت تک پھنستے رہے جہاں تک ہم پیچھے مڑ کر دیکھ سکتے ہیں۔

چیزوں کی دوڑ میں ہندوستانی انفرادیت اکثر نظروں سے اوجھل ہوجاتی ہے۔ ہم وہ واحد لوگ ہیں جنہیں تین درجہ بندی کی سخت گرفت میں رکھا گیا ۔ جاگیردار، اشرافیہ، انگریزی داں اشرافیہ اور ذات پات پر مبنی اشرافیہ بعض صورتوں میں مذکورہ بالا میں سے دو آپس میں مل جاتے ہیں۔ ہندوستان کے پہلے وزیر اعظم جواہرلعل نہرو اشرافیہ کی دونوں قسم میں سے تھے۔ کشمیری پنڈت ہونے کے ساتھ وہ انگریزی تعلیم یافتہ بھی تھے۔

ہیرواور کیمبرج میں اسکول کی تعلیم نے آریائی جلد کا رنگ اور کھادی ٹوپی کے باوجود نہرو کو ایک براؤن صاحب ہونے کا احساس دلایا۔ اس بیانیے کو ملکہ الزبتھ دوئم کے قریب لاتے ہوۓ ، نہرو نے 1953ء میں ملکہ کی تاجپوشی میں شرکت کی جس کی وجہ سے انہیں ملک میں تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ وہ نہ صرف تاجپوشی میں شریک ہوۓ بلکہ انہوں نے بی بی سی پر اپنی پہلی ٹیلی ویژن پریس کانفرنس میں تھری پیس سوٹ میں اس کے بارے میں فصاحت و بلاغت کا اظہار کیا۔ وہ اس نظارے سے بہت زیادہ متاثر تھے لیکن جس چیز نے انھیں سب سے زیادہ متاثر کیا وہ لندن کا منظم ہجوم تھا جو خراب موسم کے بارے میں کوئی ہنگامہ نہیں کر رہا تھا۔

یہ دلچسپ ہوگا کہ آیا وزیراعظم نریندرمودی 2023ء میں کنگ چارلس سوئم کی تاجپوشی میں شرکت کریں گے یا نہیں۔ وہ ان دنوں سے بہت زیادہ پختہ ہو چکے ہیں جب انہوں نے پن کی پٹی والا سوٹ پہنا تھا، جس پران کا پورا نام دھاریوں پر پیچیدہ طور پر کاڑھا گیا تھا۔ان کے میڈیا منیجر شاندار پس منظر پر رال ٹپکا رہے ہوں گے اور ذرا تصور کریں 2024ء کے عام انتخابات کے موقع پر اگر مودی شرکت کریں گے، تو انہیں یقیناً بتایا جاۓ گاکہ نئے بادشاہ بین المذاہب مکالمے کے لیے پر جوش ہیں ۔ ان کے پاس الازہر یونیورسٹی سے عزازی پی ایچ ڈی کی ڈگری ہے۔

اب نہرو کی طرف لوٹتے ہیں، ہیرو، کیمبرج اور قومی تحریک کے بعد وہ نا قابل شناخت طور پرمختلف مراحل سے گزرے ہوں گے۔ دہرادون میں مسز وجے لکشمی پنڈت کے ساتھ میری گفتگو جب وہ اپنی بیٹی نین تارا – سہگل کے ساتھ رہتی تھیں، سے مجھے ایک ایسے نہرو کے بارے میں پتہ چلا جس کو قومی تحریک کے کھادی پوش لیڈر کے ساتھ قبول کرنا مشکل تھا جو مہاتما کے پہلو میں عقیدت سے بیٹھتے تھے۔ وجے لکشمی پنڈت نے کہا، بھائی ( نہرو ) والد سے خفا تھے کیونکہ انہوں نے میرے لیے ایک انگریز آیا کی خدمات حاصل کی تھیں۔ان دنوں برطانوی اشرافی صرف فرانسیسی آیا کور ہائش دیتی تھی ۔

کیا یہ 1907ء میں ہیرو کے بعد یا 1910ء میں ٹرنٹی کالج، کیمبرج کے بعد ان میں یہ تبدیلی آئی تھی؟ یہاں برطانوی راج طاقت سے موجود تھاجس نے ہندوستان کے مستقبل کے وزیراعظم کو برطانیہ کے اعلیٰ ترین طبقے کی ثقافتی نقالی میں بدل دیا۔ ڈسکوری آف انڈیا اینڈ گلمپس آف ورلڈ ہسٹری کے مصنف نے واضح طور پر اپنے آپ کو مزید کمزور کرنے والے اثرات سے الگ کر لیا۔ کچھ روپے برقرار رہے۔ مثال کے طور پر جب ایٹن کے ماڈل پر دون اسکول قائم کیا گیا تو نہرو کی سفارش پر نہرو کے دونواسے را جیواور سنجے گاندھی کو اسکول بھیج دیا گیا۔

اگر بینجمین ڈزرائیلی نے 1857ء کو قومی بغاوت کے طور پر بیان کیا، نہرونے نو آبادیاتی انتظامیہ کی طرف سے پیش کردہ زیادہ صاف ستھرے ورژن کے ساتھ جانے کو ترجیح دی کہ یہ زمیندار طبقے کی بغاوت تھی۔ 1857ء کے تعلق سے نظر ثانی شدہ نقطہ نظر اس کی تصدیق کرتا ہے جس پر میں طویل عرصے سے یقین رکھتا ہوں۔انگریزوں کے ساتھ مشترکہ ہندو مسلم تنازعہ مشترکہ مقصد کے ساتھ سیکولر ازم کو قائم کرنے کی صلاحیت رکھتا تھا جس کی ہم نے بھی کوشش نہیں کی۔

لندن میں نہرو کی مذکورہ پہلی پریس کانفرس کے دوران، نیواسٹیٹس مین کے ایڈیٹر کنگس لے مارٹن نے ان سے ایک چبھنے والا سوال پوچھا: انگریزوں نے آپ کے ساتھ کیا کیا، اس کے باوجود برطانیہ کے خلاف کوئی ناراضگی نہیں، آپ اس کی وضاحت کیسے کریں گے؟ دوسرے الفاظ میں قومی تحریک میں کوئی معرکہ آرائی نہیں تھی، صرف کچھ جھگڑا تھا؟ ہندوستانی حکمران طبقے میں اس سوچ کو منطقی انجام تک پہنچانے میں عدم دلچسپی ہے۔ یہ ایک بڑا موضوع ہے جس پر بعد میں گفتگو ہوگی۔

ایک انکشاف کرنے والی کتاب جس کا میں نے حال ہی میں مطالعہ کیا ہے وہ ہے پرمود کپور کی 1946ء کے بحری بغاوت کی مستعدی سے تحقیقات جو کیبنٹ مشن کو دہلی بھیجنے کا محرک بنا۔ خیال یہ تھا کہ جتنی جلدی ممکن بواقتدار کومتحدہ یا تقسیم شدہ ہندوستان کو منتقل کیا جاۓ ۔ آزادی کی یہ تیزرفتاری برطانیہ کے اس خوف کی وجہ سے تھی کہ کانگریس اور مسلم لیگ کی قیادت جس سے ان کے قریبی مراسم تھے کہیں کمیونسٹوں اور بائیں بازو کے دوسرے گروہوں سے اپنی زمین نہ کھودیں۔ بحری بغاوت کی سیاسی قیادت جو برٹش انڈیا کی تمام بندرگاہوں اور بحری تنصیبات میں آگ کی طرح پھیل گئی تھی ، ایس اے ڈانگے اور ارونا آصف علی کے ہاتھوں میں تھی۔ اول الذکر بعد میں سی پی آئی کے سکریٹری جنرل بنے جبکہ ارونا آصف علی کا نگریس میں میں حاشیہ پر موجود بائیں بازو کی سوچ کے حامل لیڈر تھے۔ سیاست دان کی یہ قسم گاندھی اور سردار پٹیل کے لیے قابل نفرت تھی جو اس وجہ سے انگریزوں سے بھی زیادہ بغاوت کرنے والوں کے مخالف تھے۔ راج کے بعد کا سب سے یادگار مقابلہ مدراس کلب میں تھا جہاں پہلے ہندوستانی، مسٹر کوٹھاری کو صرف 1963ء میں داخلے کی اجازت دی گئی تھی اور جہاں 1982ء تک دیوالی کو گاۓ فاکس ڈے کے طور پر منایا جاتا تھا۔

مدراس کلب میں پرنس چارلس کے تاریخی لنچ کی کہانی بادشاہت کو دیکھنے والوں کے لیے مفید ہوسکتی ہے۔اعلان ہوا کہ پرنس کلب کے ممبروں میں شامل ہوں گے اس کے بعد ایک سخت نوٹس دیا گیا کہ تمام ممبران کو اس موقع کے لیے سوٹ پہننے کی ضرورت ہوگی۔ مدراس کے گرم موسم کے پیش نظر یہ ایک سخت فیصلہ تھا۔ یہ ایک تکلیف دو منظر تھا جس میں اراکین پسینےسے شرابور تھے اور ان کے کالروں پر پسینے کے نقشے بنے ہوۓ تھے۔ جوش و خروش اس وقت بڑھ گیا جب پرنس کا قافلہ اندر داخل ہوا۔ پھر سب کو اس وقت حیرانی ہوئی جب سفاری سوٹ میں ملبوس شہزادہ اپنی کار سے اترے اور انہوں نے اس دن کلب کے قوانین کی مکمل خلاف ورزی کی ۔کمیٹی نے بروقت فیصلہ کرتے ہوۓ اس دن کا ڈریس کوڈ منسوخ کر دیا۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین