Friday, April 12, 2024
homeاہم خبریںپارلیمنٹ کی نئی عمارت میں نصب ہونے والا ’’سینگول‘‘ کی کوئی تاریخی...

پارلیمنٹ کی نئی عمارت میں نصب ہونے والا ’’سینگول‘‘ کی کوئی تاریخی حقیقت نہیں۔ خالص ہندوتوکے ایجنڈے کا حصہ مشہور صحافی این رام نے تاریخی حقائق کے ذریعہ مودی حکومت کے پروپیگنڈ ے کو بے نقاب کیا

پارلیمنٹ کی نئی عمارت کے ایوان میں مودی حکومت کے ذریعہ نصب ’’سینگول‘‘ سے متعلق مودی حکومت نے جو دعوے کئے ہیں اس پر مشہور صحافی اور ہندوگروپ کے ڈائریکٹر نے این رام نے سوالات کھڑے کردئیے ہیں ۔انہوں نے اپنے ایک بیان میں کہ مرکزی حکومت کا یہ دعویٰ کہ 14 اگست 1947 کی رات تمل ناڈو کے تھرووادوتھورائی ادھینم (مٹھ) کے ذریعہ وزیر اعظم جواہر لعل نہرو کو سونپا گیا ’’سینگول‘‘ (دشمن) اقتدار کی منتقلی کا اشارہ کرتا ہے ۔

دی ہندو اور فرنٹ لائن کے سابق ایڈیٹر انچیف اور دی ہندو گروپ پبلشنگ پرائیویٹ لمیٹڈ کے ڈائریکٹر این رام نے آج 31مئی میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ یہ مکمل طور پر جھوٹ اور افسانہ پر مبنی تاریخی دعویٰ ہے۔انہوں نے کہا کہ اقتدار کی منتقلی ایک سرکاری حلف برداری کی تقریب تھی جو برطانوی پارلیمنٹ کے ہندوستانی آزادی ایکٹ، 1947 کی دفعات کے تحت منعقد کی گئی تھی۔ انہوں نے مزید کہاکہ اسے کسی علامت کی ضرورت نہیں تھی اور نہ ہی کسی تقدس کی ضرورت تھی۔

’’14-15 اگست 1947 کو کیا ہوا؟‘‘کے عنوان سے31مئی کو چنئی میں منعقد پریس کانفرنس میں مشہور صحافی این رام (دائیں سے دوسرے)، ڈائریکٹر، دی ہندو گروپ پبلشنگ پرائیویٹ لمیٹڈ، 31میڈیا کے نمائندوں سے خطاب کرتے ہوئے۔ساتھ میں موجود تمل ناڈو کانگریس کےصدر کے ایس الاگیری، کانگریس کے ترجمان اے گوپنا، اور سی پی آئی (ایم) لیڈر جی رام کرشنن نے بھی پریس کانفرنس سے خطاب کیا۔

این رام نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کا 28 مئی کو پارلیمنٹ کی نئی عمارت کی افتتاحی تقریب میں ’’سنگول‘‘ وصول کرنے کا عمل بی جے پی کے خالص ہندوتوا ایجنڈے کا حصہ تھا، جس کے ذریعے وہ سیاسی فائدہ حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ تمل ناڈو۔ دستاویزات، کتابوں اور سوانح حیات کا حوالہ دیتے ہوئے، رام نے 14/15 اگست 1947 کی رات کو رونما ہونے والے واقعات کو بیان کرتے ہوئے کہا کہ مرکز میں بی جے پی حکومت کے دعوئوں کے مطابق اس وقت کے وائسرائے ماؤنٹ بیٹن نے نئی قوم کے وزیر اعظم نہرو سے پوچھا کہ کیا اقتدار کی منتقلی کی علامت کے طور پر کوئی تقریب منعقد ہوئی تھی۔ حکومت کے بیانیے کے مطابق نہرو نے پہلے ہندوستانی گورنر جنرل سی راج گوپال اچاری (راجا جی) سے پوچھاتو انہوں نے نئے بادشاہ کے حوالے کرنے کے قدیم چولا رواج کے بارے میں بتایا، جو اقتدار کی منتقلی کی علامت تھی۔ نہرو نے رسم کی پیروی کرنے پر رضامندی ظاہر کی اور راجا جی نے تھرووادوتھرائی ادھینم کے سربراہ سے رابطہ کیا جو 5 فٹ اونچا سونے کا چڑھا ہوا ’’سینگول‘‘ لے کر نئی دہلی پہنچے اور پہلے اسے علامتی طور پر ماؤنٹ بیٹن کو دیا۔ اس کے بعد اقتدار کی منتقلی کرتے ہوئے نہرو کے حوالے کر دیا گیا۔ رام نے ان دعوئوں کو خالص افسانہ قرار دیا۔

14 اگست کو ہونے والے واقعات کی ترتیب کا سراغ لگاتے ہوئے، خاص طور پر دستاویزات اور دیگر ریکارڈ شدہ شواہد کے حوالے رام نے کہا کہ ماؤنٹ بیٹن 14 اگست کی رات دیر گئے تک دہلی میں موجود ہی نہیں تھے کیونکہ وہ 13 اگست کو ایک تقریب میں شرکت کے لیے کراچی گئے تھے ۔
رام نے کہاکہ وہ رات 11 بجے سے پہلے واپس آیئے۔ نہرو کو اقتدار کی باگ ڈور سونپنے کی سرکاری تقریب میں حصہ لینے کے لیے 14 اگست کو دہلی گئے، جس کے بعد نہرو کی 14/15 اگست 1947 کو دستور ساز اسمبلی میں یوم آزادی کی تقریرکی ۔

رام نے یہ بھی کہا کہ یہ دعویٰ درست نہیں ہے کہ مٹھ سے ایک ٹیم کو خصوصی پرواز سے دہلی مدعو کیاگیا تھا۔مٹھ کی طرف سے 29 اگست 1947 کو دی ہندو میں دیے گئے ایک اشتہار میں بتایا گیا تھا کہ مٹھ کے نمائندے مدراس سینٹرل ریلوے اسٹیشن سے ٹرین کے ذریعے گئے تھے۔ وہ بھی ماؤنٹ بیٹن سے نہیں مل سکے تھے۔انہوں نے کہا کہ بہت سے یادگاروں کی طرح جو نہرو کو ملے تھے’’سینگول‘‘بھی ان میں سے ایک تھا۔’’سینگول‘‘ کہانی میں راجا جی کے فرضی کردار کی بھی تردید راج موہن گاندھی نے بھی کی ہے، جو ان کے سوانح نگار اور مورخ اور مہاتما گاندھی اور راجا جی دونوں کے پوتے تھے۔

انہوں نے این ڈی ٹی وی کی ویب سائٹ پر لکھا ہے کہ انہوں نے ’’سینگول‘‘ کہانی میں راجا جی کے مبینہ کردار کے بارے میں کبھی نہیں سنا ہے۔ جواہر لعل نہرو کے سلیکٹڈ ورکس کے ایڈیٹر مورخ مادھاون کے پلاٹ نے ذکر کیا تھا کہ نہرو نے اقتدار کی منتقلی کے طور پر سینگول کو قبول نہیں کیا ہوگا۔اقتدار کی منتقلی کے بارے میں حکومتی بیانیے اور ’’سینگول‘‘ کے درمیان کوئی تعلق نہیں ہے۔ نہ ہی اس کہانی میں ماؤنٹ بیٹن سے کوئی تعلق تھا۔

رام نے کہاکہ ’’اس کا کوئی آئینی کردارنہیں ہے،‘‘ اور تمل ناڈو کے سابق وزیر اعلیٰ سی این۔ 24 اگست 1947 کو ایک تامل اخبار، دراوڑ ناڈو میں ’’سینگول‘‘ پرایک طنزیہ مضمون لکھا تھا۔

نیشنل تھنکرز فورم کے زیر اہتمام منعقد پریس کانفرنس میں تمل ناڈو کانگریس کمیٹی کے صدر کے ایس الاگیری، کانگریس کے ترجمان اے گوپنا، اور سی پی آئی (ایم) لیڈر جی رام کرشنن نے شرکت کی

متعلقہ خبریں

تازہ ترین