Saturday, December 2, 2023
homeادب و ثقافتپکاسو 50 سال بعد: 20 ویں صدی کا بڑا فنکار یا عورت...

پکاسو 50 سال بعد: 20 ویں صدی کا بڑا فنکار یا عورت مخالف؟

پکاسو کی موت کے نصف صدی بعد کیا اس عظیم فنکار کی عورت مخالفت اب اس کی میراث کو خطرے میں ڈال رہی ہے؟ ایلسٹر سمارٹ دریافت کرتے ہیں کہ یہ سالگرہ کی تقریبات کا کوئی اچھا شگون کیوں نہیں ہے۔

ایلسٹر سمارٹ

مئی 2021 میں مقامی آرٹ ٹیچر ماریا لوپیس نے اپنی طالبات کے ایک گروپ کی بارسلونا کے پکاسو میوزیم میں ’خاموش احتجاج‘ کی قیادت کی۔ اس دوران وہ ’پکاسو، خواتین کے ساتھ بدسلوکی کرنے والا‘ اور ’پکاسو، بلیو بیئرڈ (فرانسیسی افسانوی کردار سے موازنہ جس نے اپنی بیویوں کو قتل کیا)‘ جیسے پیغامات پر مبنی ٹی شرٹس میں اجتماعی طور پر گھومتی رہیں۔

پکاسو یقیناً اپنی بیوی کے قتل کا قصوروار نہیں تھا اور میوزیم میں چند سکیورٹی گارڈز کے بلڈ پریشر کو بڑھانے کے علاوہ اس احتجاج سے کوئی نقصان نہیں پہنچا تھا۔ لوپیس نے کہا کہ ان کے احتجاج کی وجہ صرف فنکار کی طرف سے خواتین کے ساتھ تاریخی بدسلوکی پر توجہ نہ دینا تھی۔

ان کے احتجاج نے ایک ایسی بحث کو شروع کیا جو اس سال کہیں زیادہ بڑے پیمانے پر ہوگی۔ کیا پکاسو ایک عورت مخالف شخص تھا؟ آرٹ بنانے کے لیے اخلاقی پاکیزگی ضروری نہیں ہے، لیکن ہم گندگی کی کس سطح کو برداشت نہیں کریں گے؟

پکاسو آٹھ اپریل 1973 کو 91 سال کی عمر میں انتقال کر گئے تھے۔ 2023 کو ان کے انتقال کی 50 ویں برسی ہے۔ اس موقعے کو منانے کے لیے فرانسیسی اور ہسپانوی حکومتیں مل کر نمائشوں اور تقریبات کا ایک سال طویل پروگرام ترتیب دے رہی ہیں: پکاسو جشن 1973-2023۔

اس کا باقاعدہ آغاز میڈرڈ کے رینا صوفیہ میوزیم میں گذشتہ موسم خزاں میں ایک پریس کانفرنس میں کیا گیا تھا، جہاں سپین کے بادشاہ مقررین میں شامل تھے۔ (مزے کی بات یہ ہے کہ بادشاہ نے پکاسو کے اس مشاہدے کا ذکر نہیں کیا کہ ’خواتین مصائب کی مشینیں ہیں)۔‘

اس دوران 40 سے زیادہ نمائشیں منعقد کی جا رہی ہیں جن میں سے زیادہ تر سپین اور فرانس میں ہیں جبکہ دیگر ممالک جیسے کہ امریکہ، جرمنی، سوئٹزرلینڈ، موناکو، رومانیہ اور بیلجیئم میں بھی یہ منعقد کی جا رہی ہیں۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ کوئی بھی برطانوی ادارہ شو کی میزبانی نہیں کر رہا ہے۔ اس پر مزید بات آگے چل کر کرتے ہیں۔

شیڈول پر ایک نظر بتاتی ہے کہ آنے والا سال، جیسا کہ پروگرام کے نام سے پتہ چلتا ہے، زیادہ تر جشن منانے پر مبنی ہو گا۔ نمائشوں میں نیو یارک کے گوگن ہائم میوزیم اور پیرس میں ینگ پکاسو شامل ہیں، جس میں فنکار کے 20 کی دہائی کے اوائل میں فرانسیسی دارالحکومت میں عہد سازی پر توجہ مرکوز کی گئی تھی۔

22 فروری 2023 کو وسطی لندن میں سوتھیبی کے نیلام گھر میں فوٹو کال کے دوران پابلو پکاسو کے فن پارے ‘فلیٹ او باتو (مایا)’ کو ایک ملازمہ درست کر رہی ہیں (اے ایف پی)

مختصراً، یہ شوز پکاسو کے کیریئر کے بہت سے ادوار اور کامیابیوں پر ایک وسیع اجتماعی نظر پیش کریں گے۔ اس کی تخلیقی ذہانت تنازعے سے بالاتر ہے: یہاں ایک ایسا آدمی تھا جس نے انسانی شخصیت کی عکاسی کرنے کے پہلے سے زیادہ بنیادی طریقے تلاش کرنے میں 70 سال گزارے۔ ان پروگراموں میں شرکت کرنے والوں نے البتہ کچھ احتیاط سے منتخب الفاظ پہلے سنے ہوں گے۔ سپین کے ثقافت اور کھیلوں کے وزیر میکوئیل آئسیٹا نے کہا کہ ’اگر کوئی ایسا فنکار ہے جو 20ویں صدی کی نمائندگی کرتا ہے، جو تمام تر ظلم، تشدد، جذبے، زیادتیوں اور تضادات کے ساتھ اس کی نمائندگی کرتا ہے، تو یہ بلاشبہ پابلو پکاسو ہے۔‘

فرانسیسی وزیر ثقافت ریما عبدالمالک نے جواب میں کہا: ’چلیں اپنا چہرہ نہ چھپائیں۔ آج پکاسو کے کام کے استقبال کے اردگرد خاص طور پر ان کے خواتین کے ساتھ تعلقات سے متعلق بہت سی بحثیں ہیں۔ نوجوان نسلوں کو اس کے فن کی طرف لے جانے کے لیے، ہمیں ان کو ان کے کام [اور] زندگی کو سمجھنے اور تبادلہ خیال کی کھلی جگہیں فراہم کرنا ہوں گی۔‘

یہ ایسا ہی ہے جیسے وزرا کا منصوبہ، رگبی کے عظیم ولی جان میک برائیڈ سے ایک جملہ ادھار لیتے ہوئے سب سے پہلے ان کا ردعمل حاصل کرنا تھا۔ یعنی کسی بھی تنقید کا پہلے سے توڑ حاصل کرنا جو # MeToo کے بعد کے دور میں، 2023 کا پروگرام خالصتاً تعریف کے مترادف ہے۔ دونوں وزرا نے آگاہ کیا کہ ہمیں کسی تاریخی شخصیت کو عصری اقدار سے پرکھنا نہیں چاہیے۔ جو ایک حد تک منصفانہ بات ہے۔ لیکن بعض اعمال قابل مذمت ہوتے ہیں جو بھی زمانہ ہو۔

آئیے آرٹسٹ پر الزامات کی شیٹ پر ایک نظر ڈالیں، اور لوگ خود اپنا ذہن بنا سکتے ہیں۔ پکاسو ایک سیریل فیلینڈر یا ویمنائزر تھا۔ جب اس کی پہلی بیوی اولگا کے ساتھ شادی خراب ہوئی (اور ساتھ میں ان کی ذہنی صحت)، انہوں نے 17 سالہ میری-تھریس والٹر کے ساتھ تعلقات شروع کیے۔ وہ 45 سال کا تھا – اور انہوں نے تیزی سے اسے درد دینے والے جنسی تعلقات کے طریقوں سے آگاہ کیا۔

ایک دہائی بعد جب والٹر کو پکاسو کے تازہ ترین معشوق فوٹوگرافر ڈورا مار سے حسد ہوا تو پکاسو نے اس جوڑے کو اسے حاصل کرنے کے لیے آپس میں لڑنے کو کہا۔ واقعی۔

اپنے سٹوڈیو میں، جب وہ پینٹنگ کرتا تھا۔ بعد میں اس نے مبینہ طور پر اسے ’میری پسندیدہ یادوں میں سے ایک‘ کے طور پر بیان کیا۔ جب پکاسو نے اسے چھوڑ دیا تو مار کو اعصابی بیماری نے لپک لیا جس کا اس نے نفسیاتی ہسپتال میں کئی ہفتوں تک بجلی کے جھٹکوں سے علاج کروایا۔

وہ اپنے اگلے پریمی فرانکوائس گیلوٹ کو روزانہ فجر کے وقت اپنے سٹوڈیو میں چولہے جلانے کے لیے بیدار کرتا تھا۔ اس سے علیحدگی کے بعد اس نے اپنے دو بچوں کو دیکھنے سے انکار کر دیا، جب اس کی بیوی نے ان کے تعلقات پر مبنی ایک سوانح ’لائف ود پکاسو‘ (1964) شائع کی۔

کبھی کبھار غیر مصدقہ دعوے ہوتے رہے ہیں – بہت سے اریانا ہفنگٹن کی کتاب ’پکاسو: کریٹر اینڈ ڈسٹرائر‘ (1988) میں کہ انہوں نے شخص نے خواتین کے خلاف جسمانی تشدد کا استعمال کیا۔ مثال کے طور پر ہفنگٹن نے دعویٰ کیا کہ اس نے ایک بار گیلوٹ کے گال پر جلتا ہوا سگریٹ رکھا تھا۔

تاہم اس بات پر زور دیا جانا چاہیے کہ صرف نفسیاتی تشدد کو حقائق کے طور پر دستاویزی شکل دی گئی ہے۔ پکاسو کی بعض محبت کرنے والوں کی وحشیانہ عکاسی – جیسے کہ 1929 کی اولگا کی ایک انتہائی بھدے جسم کے ساتھ پینٹنگ، لارج نیوڈ ان اے ریڈ آرم چیئر – اس کی مزید مثالیں سمجھی جا سکتی ہیں۔

مصور کی پوتی مرینا پکاسو اپنی کتاب ’پکاسو، مائی گرینڈ فادر‘ (2001) میں لکھتی ہیں کہ ان کے اپنے ساتھیوں کے ساتھ سلوک ایک طریقے کی پیروی کرتا ہے: ’اس نے انہیں اپنی جانورانہ جنسیت کے حوالے کیا، انہیں قابو کیا، ان پر جادو کیا، ان کو کھایا اور انہیں اپنی کینوس پر کچل دیا۔ کئی راتیں ان کا اصل نکالنے میں گزارنے کے بعد، ایک بار جب ان کا خون خشک ہو جاتا تو وہ ان کو ضائع کر دیتا۔‘

جون میں بروکلین میوزیم میں شروع ہونے والی نمائش پکاسو اور فیمینزم اس پہلو کا احاطہ کرے گی۔ یہ سال کا سب سے شدید تنقیدی شو ہونے کے لیے تیار ہے۔ آسٹریلوی کامیڈین ہننا گیڈسبی کے تعاون سے تیار کردہ، ہمیں بتایا گیا ہے کہ یہ ’بدتمیزی، مردانگی، تخلیقی صلاحیتوں اور ‘جینیئس’ کے باہم جڑے ہوئے مسائل‘ کو تلاش کیا جائے گا۔

یہ پکاسو کے بارے میں اس دن کی پوری بحث کا اہم ترین حصہ ہونے کا وعدہ کرتی ہے: کیا لاکھوں فن سے محبت کرنے والوں کی خوشی اس کے ہاتھوں مٹھی بھر خواتین کے دکھ کو جائز قرار دیتی ہے؟ اس سے جڑے، کیا تنہائی، مرد، تخلیقی استاد کا امتزاج – جو مغربی ثقافتی تعریف میں بہت زیادہ ہے – حقیقت میں بدگمانی کی حوصلہ افزائی نہیں کرتا؟

آرٹ کی تاریخ میں گریجویٹ گیڈسبی نے 2018 میں نیٹ فلکس کے سٹینڈ اپ شو Nanette میں ہلچل پیدا کی جس کے بعد انہیں ہٹا دیا گیا تھا۔ ’میں پکاسو سے نفرت کرتی ہوں،‘ اس نے اس بات پر بحث کرنے سے پہلے کہا کہ مرد فنکاروں کی طرف سے مردوں کے تسلط والے معاشرے کی طرف سے طویل عرصے سے کس طرح خوفناک سلوک روا رکھا گیا ہے۔

انہوں نے کہا، ’آرٹ ہسٹری کا شکریہ۔ میں اس دنیا کو اور اس میں اپنے مقام کو سمجھتی ہوں۔ میرے پاس ایک بھی نہیں ہے۔‘

وقت بتائے گا کہ اس سال کے دوسرے کیوریٹر کتنی مذمت کریں گے۔ مونٹ مارٹری میوزیم میں حال ہی میں فرنانڈ اولیور اور پابلو پکاسو کی بند ہونے والی نمائش نے ایک دلچسپ مثال قائم کی۔ اس سے ہسپانوی کو اس کے ساتھی فنکار فرنانڈ اولیور اور دیگر فنکاروں کے ساتھ برابر عزت ملی، جنہوں نے اپنا کام شانہ بشانہ دکھایا۔

اس کا مقصد ان دہائیوں سے اولیور کے فن کو نظر انداز کیے جانے کا مداوا کیا جاسکے اور انہیں پکاسو کی کائنات میں صرف ایک سیارے کے طور پر یاد کیا جائے۔

2019-20 میں ٹیٹ ماڈرن میں ڈورا مار ​​​​کا بھی یہی ارادہ تھا۔ جیسا کہ لوپیس نے اپنے احتجاج کے بعد اسے انسٹاگرام پر ڈالا، ’پکاسو نے اپنی زندگی میں ہر عورت کی تخلیقی طاقت کو کھا کر بلیو بیئرڈ (ایک صدیوں پرانی لوک کہانی) کا کردار ادا کیا۔‘

پکاسو جشن 1973-2023 میں برطانوی شرکت کی کمی کے بارے میں کیا کرنا ہے؟ کیا کوئی قومی بائیکاٹ ہے جس سے ہم واقف نہیں ہیں؟ ٹیٹ ماڈرن کے ڈائریکٹر فرانسس مورس کہتے ہیں ’نہیں، نہیں۔ سالگرہ کے سال شہد کے برتن جیسے ہوتے ہیں… اور اس بات کا خطرہ ہے کہ دنیا بھر میں کسی فنکار کے کام کو مستعار لینے کے رش میں کسی بھی شو کے معیار سے سمجھوتہ ہو جائے گا۔‘

دوسرے الفاظ میں اس ملک میں فرانسیسی اور ہسپانوی جو کچھ کر رہے تھے اس کا مقابلہ کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں تھی۔ ٹیٹ آنے والے سالوں میں پکاسو شو کا انعقاد کرے گا، لیکن۔ مورس کہتے ہیں کہ ’نمائشوں سے حاصل ہونے والی آمدن برطانوی میوزیم کے کاروباری ماڈل کا ایک اہم حصہ ہے۔ نمائشوں میں آنے والوں کو راغب کرنے کا سب سے آسان طریقہ ایسے فنکاروں کو [دکھا کر] ہے جو عوامی شعور میں ہیں اور پکاسو اس فہرست میں بہت اوپر ہے۔‘

ٹیٹ ماڈرن کا اس فنکار کے لیے وقف کردہ آخری شو پکاسو 1932 تھا: محبت، شہرت، 2018 کا سانحہ۔ اس نے 521080 افراد کو اپنی طرف متوجہ کیا، جس سے یہ ٹیٹ کی چار گیلریوں میں سے کسی ایک میں منعقد ہونے والی تیسری مقبول ترین نمائش بن گئی۔

پکاسو کے کام کی مارکیٹ خراب نہیں ہے۔ ان کی پانچ پینٹنگز نیلامی میں دس کروڑ ڈالر (£82m) سے زیادہ میں فروخت ہوئی ہیں – بشمول والٹر، Femme Assise Près d’une Fenêtre (Marie-Thérèse) کی تصویر ۔ کرسٹیز 2021 میں۔ نیلام گھر کی پریس ریلیز عالمی سطح پر پکاسو کے بہت بڑے ’برانڈ کی پہچان‘ کے بارے میں باقاعدگی سے بات کرتی ہے، جس میں ایشیا میں ان کے کام کو جمع کرنے والوں کی دلچسپی بڑھ رہی ہے۔

تازہ ترین برنس ہالپرین رپورٹ کے مطابق آرٹ کی دنیا میں ایک کاغذی مساوات سے باخبر رہنے کے لیے، پکاسو کے کام کی فروخت نے 2008 اور 2022 کے درمیان نیلامی میں تمام خواتین فنکاروں کے مشترکہ کام سے زیادہ رقم کمائی ($6.23bn بمقابلہ $6.2bn)۔

اور آج کے فنکاروں پر ان کا اثر کتنا ہے؟ یہ کہنا مناسب ہے کہ آرٹ کے موجودہ ہیوی وائٹس میں سے کچھ نے پکاسو کی اس طرح تعریف کی جس طرح ان کے 1980 کی دہائی کے ہم پلہ نے – جیسے کہ رائے لِکٹینسٹائن، لوئیس بورژوا، رابرٹ راؤشین برگ اور کرسٹو نیویارک ٹائمز میں ان کے کام کی میوزیم آف ماڈرن آرٹ میں ایک ماضی کی ​​تحریر میں کی تھی۔

شاید پکاسو کے اثر و رسوخ کو وسیع معنوں میں محسوس کیا جا سکتا ہے، حالانکہ آرٹ کے بارے میں ان کے کثیر الثباتی نقطہ نظر میں انہوں نے پینٹنگ، ڈرائنگ، مجسمہ سازی، پرنٹ میکنگ، سیرامکس، تھیٹر سیٹ ڈیزائن اور بہت کچھ آزادانہ طور پر ۔ فیشن ڈیزائنر پال سمتھ نے حال ہی میں ایک شو سے پہلے جو وہ میوزی پکاسو پیرس میں کر رہے ہیں دی آرٹ نیوز پیپر کے ساتھ ایک انٹرویو میں اس پر تبادلہ خیال کیا۔

عورت کی رضامندی کیا ہوتی ہے؟
سمتھ کہتے ہیں کہ ’پکاسو کا آج کل کام کرنے والے کسی بھی تخلیقی شخص سے تعلق ہے۔ اس نے کچھ بھی دلچسپ پایا اور… تجربے اور تاریخ اور تعلیم سے بے ترتیبی کا شکار نہیں ہوا، بلکہ سوچنے کے نئے طریقوں کے لیے کھلا رہا۔‘

موجودہ دور کی ایک فنکار جس نے پکاسو کو ایک ’بڑے متاثر کن‘ کے طور پر پیش کیا ہے وہ ان کی تیسویں پیٹے میں ہم وطن کوکو ڈیویز ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ وہ ’سمجھتی ہیں‘ انہیں ختم کرنے کا مطالبہ کیوں کیا جاتا ہے۔ لندن کی میڈڈوکس گیلری میں ان کی ایک نئی نمائش کے لیے – جس میں ڈیویز کے ٹریڈ مارک انداز میں مشہور جوڑیوں کی چہرے کے خدوخال کے بغیر پینٹنگز – وہ اپنے دوست، کوکو شنیل کے ساتھ پکاسو کی تصویر چھوڑنے والی تھیں۔

تاہم، وہ کہتی ہیں انہوں نے اسے آخر میں شامل کیا کیونکہ انہوں نے فیصلہ کیا کہ ’تخلیق کار کے رویے سے قطع نظر فن کو تسلیم کرنے کا کوئی طریقہ ہونا چاہیے۔‘

مصیبت یہ ہے کہ پکاسو کے ساتھ ان کا فن ہمیشہ ان کی زندگی کی کہانی سے جڑا ہوا ہے۔ جیسا کہ انہوں نے خود کہا، ’میرے کینوسز… میری ڈائری کے صفحات ہیں۔‘

تو یہ ہمیں کہاں پہنچاتا ہے؟ پکاسو اتنی بڑی ثقافتی شخصیت ہونے کے ساتھ کسی کو شبہ ہے کہ اس کی حیثیت میں کوئی بھی تبدیلی بتدریج ہوگی۔ ڈیویز کے پورٹریٹ کا بظاہر معمولی معاملہ اگرچہ ایک یاد دہانی ہے کہ آنے والے سال میں بہت سے غیر متوقع موڑ آ سکتے ہیں۔

اس فنکار کی ساکھ ماضی سے کہیں زیادہ خطرات میں گھری دکھائی دیتی ہے – یہاں تک کہ اگر پکاسو کی پوری تقریب 1973-2023 کے جمبوری کی منصوبہ بندی کے باوجود کوئی یہ بھی نہیں کہہ سکتا کہ اسے ختم کیا جا رہا ہے۔ جب سال ختم ہو جائے گا تو ہمیں بہتر اندازہ ہونا چاہیے کہ 20ویں صدی کے عظیم ترین مصور پکاسو کا 21ویں کے معاشرے میں کیا مقام ہے۔

پکاسو جشن 1973-2023 کے بارے میں مزید معلومات، بشمول نمائشیں اور تقریبات، celebracionpicasso.es پر مل سکتی ہیں۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین