Friday, April 12, 2024
homeاہم خبریںہلدوانی فرقہ وارانہ فسادات: اترکھنڈ کو ہندئوں کیلئے مقدس سرزمین بنانے کیلئے...

ہلدوانی فرقہ وارانہ فسادات: اترکھنڈ کو ہندئوں کیلئے مقدس سرزمین بنانے کیلئے اقلیتوں کا ناطقہ بند کیا جارہا ہے:فیکٹ فائنڈنگ رپورٹ

نئی دہلی ، 17فروری :۔

اتراکھنڈ کے ہلدوانی علاقے میں بنبھول پورہ میں پیش آئے تشدد کے بعد وہاں مقامی مسلمانوں کو جن مصائب کا سامنا ہے وہ انتہائی خوفناک ہے۔پولیس اور انتظامیہ کی جانب سے تشدد کے بعد جس طریقے سے مسلمانوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے اس کی حقیقی صورت حال تو متاثرین ہی بتا سکتے ہیں لیکن دورہ کرنے گئی ٹیم نے جو مشاہدہ کیا ہے اس سے پولیس جبر کا انکشاف ہوا ہے۔

انسانی حقوق کے کارکنوں کی ایک فیکٹ فائنڈنگ ٹیم نے جمعرات کو دہلی کے پریس کلب میں ہلدوانی کا دورہ کرنے کے بعد ایک رپورٹ جاری کی۔ اپنی رپورٹ میں چھ روزہ کرفیو اور پولیس کے جبر و بربریت کی وجہ سے یومیہ اجرت کمانے والوں کو درپیش بڑی مشکلات اور مصائب کا ذکر کیا گیا ہے۔

انڈی ٹو مارو کی رپورٹ کے مطابق ایسوسی ایشن فار پروٹیکشن آف سول رائٹس (اے پی سی آر) کے ندیم خان اور محمد مبشر انیک، کاروان محبت کے کمار نکھل، ہرش مندر، نوشرن سنگھ، اشوک شرما اور شہری حقوق کے کارکن زاہد قادری پر مشتمل فیکٹ فائنڈنگ ٹیم نے 14فروری کو ہلدوانی کا دورہ کیا۔ اور 8 فروری 2024 کو ہونے والے پرتشدد واقعات کے بارے میں اپنی عبوری رپورٹ جاری کی ۔یہ رپورٹ جمعرات 15 فروری 2024 کو پریس کلب آف انڈیا، نئی دہلی میں جاری کی گئی۔

اپنی عبوری رپورٹ میں، ٹیم کے ارکان نے کہا کہ چونکہ تشدد سے متاثرہ افراد کرفیو کی زد میں ہیں، اس لیے ان کے لیے متاثرہ افراد سے براہ راست ملاقات اور بات کرنا ممکن نہیں تھا۔ لہذا، عبوری رپورٹ سول سوسائٹی کے ارکان، صحافیوں، مصنفین اور وکلاء کی ایک بڑی تعداد سے بات چیت پر مبنی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کچھ متاثرہ افراد سے ٹیلی فون پر بات چیت بھی ہوئی جنہوں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر ان سے بات کی۔ ٹیم نے ضلعی انتظامیہ کے ارکان سے بھی رابطہ کرنے کی کوشش کی تاہم انہوں نے یا تو کوئی جواب نہیں دیا یا انہیں بتایا کہ وہ بہت مصروف ہیں اس لیے ٹیم سے ملاقات نہیں کر سکے۔

فیکٹ فائنڈنگ ٹیم نے پایا کہ بنبھول پورہ، ہلدوانی میں 8.02.2024 کو جو پرتشدد واقعہ پیش آیا وہ اچانک نہیں ہوا تھا۔ یہ حالیہ برسوں میں ریاست اتراکھنڈ میں فرقہ وارانہ کشیدگی میں مسلسل اضافے کا نتیجہ ہے۔انہوں نے کہا، “وزیر اعلی پشکر دھامی کی زیر قیادت ریاستی حکومت اور بنیاد پرست دائیں بازو کے گروپوں نے مل کر ایسے حالات پیدا کئے ہیں۔ اس تشدد کے پس پردہ ایک پہلو یہ بھی ہے کہ اتراکھنڈ کو ہندوؤں کے لیے ایک مقدس سرزمین ‘دیو بھومی’ بنانے کا ہے، جس میں دیگر مذہبی اقلیتوں کے لیے کوئی جگہ نہیں ہوگی۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ وزیر اعلیٰ نے بارہا اعلان کیا ہے کہ ان کی حکومت ’’لو جہاد‘‘ اور جہاد کی دیگر تمام مبینہ شکلوں کے خلاف سخت ترین کارروائی کرے گی۔ وزیر اعلیٰ نے 3000 مقبروں کی مسماری کو بھی اپنی حکومت کا کارنامہ قرار دیا ہے، جب کہ انہوں نے جنگلات اور نزول زمینوں میں غیر مجاز ہندو مذہبی ڈھانچوں کے بارے میں خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔

اس کے ساتھ ہی رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ’’مجوزہ بے دخلی کو سپریم کورٹ کے حکم سے روک دیا گیا ہے۔ حال ہی میں ہلدوانی میں مسلم اکثریتی علاقوں میں شہری اراضی کی قانونی ملکیت کو لے کر ایک بار پھر تنازعہ کھڑا ہوا ہے۔ ان زمینوں پر قابض لوگ زمین کے اصل کرایہ دار ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں، جبکہ ریاستی حکومت نے موقف اختیار کیا ہے کہ یہ نزول (سرکاری) زمینیں ہیں۔

فیکٹ فائنڈنگ رپورٹ میں مزید یہ نتیجہ اخذ کیا گیا کہ فوری تنازعہ تقریباً 6 ایکڑ اراضی سے متعلق ہے جس کے بارے میں صوفیہ ملک کی جانب سے لیز پر دینے کا بجا طور پر دعویٰ کیا گیا ہے۔ دوسری طرف ریاستی حکومت کا دعویٰ ہے کہ یہ نزول زمین ہے۔ اس زمین کے ایک حصے میں 20 سال پرانی مسجد اور مدرسہ واقع ہے۔ حالیہ ہفتوں میں، دیگر رہائشی عمارتوں پر بے دخلی کے نوٹس بھیجے گئے ہیں اور بغیر کسی مزاحمت کے مسماری کا کام کیا گیا ہے۔

فیکٹ فائنڈنگ ٹیم نے کہا کہ، ملکیت کے سوال کو حل کرنے کے لیے ہائی کورٹ کی مداخلت سے مطمئن مقامی کمیونٹی کے ساتھ معاملہ پرامن رہا، تاہم 08.02.2024 کی شام کو بغیر کسی وارننگ کے میونسپل آفس کے اہلکاروں نے پولیس کی حفاظت کے ساتھ کارروائی کی۔ جس کو روکنے کے لئے خواتین کی ایک بڑی تعداد نے مظاہرہ کیا جس کے بعد تشدد برپا ہو گیا۔

متعدد عینی شاہدین کے مطابق سینکڑوں راؤنڈ فائر کیے گئے اور مقامی لوگوں کا خیال ہے کہ زخمی اور ہلاک ہونے والوں کی تعداد سرکاری دعووں سے کہیں زیادہ ہو سکتی ہے، حالانکہ ٹیم کے ارکان کا کہنا تھا کہ وہ حالات کی وجہ سے اس کی تصدیق کرنے سے قاصر ہیں۔

عبوری رپورٹ میں یہ نتیجہ اخذ کیا گیا، “سول سوسائٹی کے سینئر اراکین اور متاثرہ علاقوں کے لوگ جن سے ہم ٹیلی فون کے ذریعے رابطہ کرنے کے قابل تھے، بشمول مقامی صحافی، نے اطلاع دی کہ پولیس نے اندازے کے مطابق 300 گھروں کی بڑے پیمانے پر تلاشی لی، انہوں نے مبینہ طور پر مار پیٹ کی۔ لوگ جن میں خواتین بھی شامل ہیں اور گھروں کے اندر بچوں اور املاک اور باہر کھڑی گاڑیوں کو شدید نقصان پہنچایا۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا، “بڑی تعداد میں نوجوانوں، کچھ خواتین اور نوجوانوں کو مبینہ طور پر حراست میں لیا گیا، مارا پیٹا گیا اور پوچھ گچھ کے لیے نامعلوم مقامات پر لے جایا گیا، جس سے پورے علاقے میں خوف و ہراس پھیل گیا۔ یہ خوف انٹرنیٹ کی بندش کے باعث مزید بڑھ گیا ہے جو ٹیم کے دورے کے دن تک جاری رہا۔ “مسلسل کرفیو کے ساتھ ساتھ، رہائشیوں کو اپنے خوف، خدشات، شکایات جیسے کہ توڑ پھوڑ اور حملہ کے واقعات بھیجنے اور رپورٹ کرنے کی بھی اجازت نہیں ہے۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین