Friday, April 12, 2024
homeاہم خبریںسخت فیصلے کیلئے مشہور جسٹس ابھیجیت گنگو پادھیائے کارضاکارانہ ریٹائرڈ منٹ لے...

سخت فیصلے کیلئے مشہور جسٹس ابھیجیت گنگو پادھیائے کارضاکارانہ ریٹائرڈ منٹ لے کرسیاست میں شامل ہونے کا اعلان

کلکتہ َ
ایک بے مثال واقعہ میں کلکتہ ہائی کورٹ کے موجودہ جج جسٹس ابھیجیت گنگوپادھیائے نےآج اتوار کو اعلان کیا کہ وہ جج کے عہدے سے استعفیٰ دے کر سیاست میں شامل ہو جاں گے۔

جسٹس ابھیجیت گنگو پادھیائے اگست میں ریٹائر ہونے والے ہیں۔ اپنے ساتھی ججوں ، حکمراں جماعت ترنمول کانگریس اور ممبر پارلیمنٹ لیڈر ابھیشیک بنرجی کے خلاف متواتر ریمارکس کی وجہ سے تنازعات کے شکار رہے ہیں۔

بنگلہ نیوز چینل اے بی پی آنند کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میں سیاست کے میدان میں اتروں گا۔ میں آج آپ کو یہ نہیں بتا رہا ہوں کہ میں کس پارٹی سے شامل ہوں گا۔ میں پہلے وہ چھوٹا سا کام ختم کرنا چاہتا ہوں جو ابھی عدالت میں باقی ہے۔ کل، میں اسے نمٹائووں گا۔ چیف جسٹس کو زبانی آگاہ کروں گا۔ اور پرسوں صبح،میں پہلے گھنٹے میں اپنا استعفیٰ صدر کو بھیج دوں گا۔

اگرچہ جج نے ابھی تک اپنا استعفیٰ باضابطہ طور پر پیش نہیں کیا ہے، لیکن ان کا اعلان بی جے پی کی جانب سے لوک سبھا انتخابات کے لیے امیدواروں کی پہلی فہرست کے ایک دن بعد آیا۔ابھی چند سیٹوں پر امیدواروں کے نام کا اعلان باقی ہے۔

جسٹس گنگوپادھیائے، جن کے ماضی میں ٹی وی انٹرویوز کی وجہ سے سپریم کورٹ نے ناراضگی ظاہر کی تھی اور ترنمول کانگریس نےانہیں عدالت چھوڑ کر سیاست میں آنے کا مشورہ دیا تھا۔انہوں نے کہا کہ اس کے لیے مجھے اپنی حکمران جماعت کو مبارکباد دینا ہے: جب بھی میں نے انصاف کرنے کی کوشش کی ہے، اگر انہیں یہ پسند نہیں آیا، تو انہوں نے اپنے مختلف ترجمانوں کو جج اور عدلیہ کے خلاف توہین آمیز اور طنزیہ بیانات دینے کے لیے استعمال کیا ہے۔

یہ پوچھے جانے پر کہ وہ کس پارٹی میں شامل ہوں گے انہوں نے کانگریس، بائیں بازو، بی جے پی اور چھوٹی پارٹیوںکا ذکر کیا۔

’’میں نے جن پارٹیوں کے نام لیے ہیں ان میں ترنمول کانگریس کا ذکر نہیں کیا۔ میں نے کہا ہے کہ ترنمول کے تحت مغربی بنگال چوروں کی سلطنت ہے۔ اس پارٹی میں شامل ہونے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ میں دیکھ سکتا ہوں کہ پارٹی دھیرے دھیرے پیچھے ہوتی جا رہی ہے، ٹوٹ رہی ہے… بڑا سوال مغربی بنگال کے وقار کاہے، جو چٹان کی تہہ تک پہنچتا جارہا ہے، کیا مغربی بنگال کو بچانا ممکن ہے۔

گزشتہ دو سالوں میںجسٹس گنگوپادھیائے کے کمرہ عدالت نے کئی ڈرامائی مناظر دیکھے ہیں جس میں جج نے ریاستی حکومت اور ٹی ایم سی لیڈر کی نمائندگی کرنے والے وکلاء کے ساتھ کھل کر جھگڑا بھی شامل ہے۔

ستمبر 2022 میں اے بی پی آنند کو ایک گھنٹہ طویل انٹرویو میں، جج نے کھل کر ابھیشیک بنرجی کے مالی معاملات پر سوال اٹھایا تھا اور ایک الگ، غیر متعلقہ کیس میں ایک (بھتیجے)کی دولت جمع کرنے کے بارے میں زبانی تبصرہ کیا تھا۔
اس کے بعد ترنمول کانگریس کے ترجمان کنال گھوش نے ان کی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ انہیں استعفیٰ دے کر ابھیشیک بنرجی کے خلاف الیکشن لڑنا چاہیے۔

اتوار کو انٹرویو میں جسٹس گنگوپادھیائے نے کہا کہ کلکتہ ہائی کورٹ میں ان کا آخری دن 4 مارچ بروز پیر ہوگا اور وہ منگل 5 مارچ کو اپنا استعفیٰ صدر کو بھیجیں گے۔

حکمراں ترنمول کانگریس پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ریاست میں بدعنوانی عروج پر ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ وہ کمرہ عدالت سے عام لوگوں تک نہیں پہنچ پا رہے ہیں۔
ایک بنگالی کے طور پر، میں اسے قبول نہیں کر سکتا۔ جو حکمران بن کر ابھرے وہ ریاست کو فائدہ پہنچانے کے قابل دکھائی نہیں دیتے تھے۔ میں چیلنج لوں گا اور میں نے منگل کو استعفیٰ دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ پیر کو میں عدالت میں حاضر ہوں گا کیونکہ میرے پاس بہت سے مقدمات ہیں۔

حالیہ دنوں میں جسٹس گنگوپادھیائے تنازعات کے مرکز میں رہے ہیں، انہوں نے بھرتی گھوٹالہ میں مرکزی ایجنسیوں کی طرف سے تحقیقات کا حکم دیا، تحقیقات کی سست رفتار پر سوال اٹھائے اور ایجنسیوں سے ’’اصل مجرموں‘‘ کو پکڑنے کی ہدایت دی ۔

کئی فیصلوں میں، جسٹس گنگوپادھیائے نے تفتیشی ایجنسیوں کو دن کے اختتام تک ایف آئی آر درج کرنے اور جانے پہچانے چہروں، وزراء یا بورڈ یا بھرتی کرنے والے ادارے کے چیئرمینوں سے آدھی رات تک یا ایک مقررہ وقت کے اندر پوچھ گچھ کرنے کی ہدایت دی ہے۔

اتوار کو جج کے اعلان پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئےترنمو ل کانگریس کے ریاستی ترجمان دیبانگشو بھٹاچاریہ نے کہاکہ ہم طویل عرصے سے کہہ رہے ہیں کہ وہ ایک سیاسی پارٹی کے کارکن ہیں۔ ہم آج ان کا شکریہ ادا کرتے ہیں کہ انہوں نے ہمیں درست ثابت کیا۔

ریاستی بی جے پی صدر سوکانت مجومدار نے جسٹس گنگوپادھیائے کے سیاست میں شامل ہونے کے فیصلے کا خیر مقدم کیا۔ ابھیجیت گنگوپادھیائے جیسے لوگوں کا سیاست میں شامل ہونا ملک کے حق میں ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ بی جے پی ان کا فطری انتخاب ہو۔

کانگریس لیڈر ادھیر رنجن چودھری نے کہا کہ ان کی پارٹی جسٹس گنگوپادھیائے کا استقبال کرے گی۔ وہ کرپشن کے خلاف تھے۔ اگر وہ کانگریس میں شامل ہونا چاہتے ہیں تو ہم ان کا پرتپاک استقبال کریں گے۔ وہ ایک لڑاکا ہے۔ اگر وہ بی جے پی میں شامل ہوتے ہیں تو نظریاتی طور پر ہم ان کی حمایت نہیں کر سکتے۔ چودھری نے ایک بار کہا تھا کہ وہ جسٹس گنگوپادھیائے کو مغربی بنگال کا وزیر اعلیٰ بنانا چاہیں گے۔

ریاستی و کلکتہ کارپوریشن کے میئرفرہاد حکیم نے کہا کہ اس طرح کی کارروائیوں سے لوگوں کا عدلیہ پر سے اعتماد ختم ہو رہا ہے۔ عدلیہ کا احترام ہے۔ ہم جج کو خدا کے ساتھ دیکھتے ہیں۔ وہ (گنگوپادھیائے) جو کچھ کر رہے ہیں وہ ان کی ذاتی پسند ہے… ایسی بہت سی مثالیں ہیں، آہستہ آہستہ لوگوں کا عدلیہ پر سے اعتماد ختم ہو رہا ہے۔

جسٹس گنگوپادھیائے مئی 2018 میں ایڈیشنل جج کے طور پر تعینات ہونے سے پہلے کلکتہ ہائی کورٹ میں وکیل تھے۔ 2020 میں، انہیں کلکتہ ہائی کورٹ کے مستقل جج کے طور پر ترقی دی گئی تھی۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین