Friday, April 12, 2024
homeادب و ثقافت"آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو" چشمِ نم نوحہ لکّھے...

“آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو” چشمِ نم نوحہ لکّھے تو کیا فائدہ :فلسطین کے موضوع پر اطہر عباسی کی نظم کے کھوار تراجم کا جائزہ

ڈاکٹر رحمت عزیز خان

جدہ سعودی عرب سے تعلق رکھنے والے اردو کے معروف شاعر اطہر عباسی نے ادبی دنیا میں خود کو ایک ممتاز ادبی شخصیت کے طور پر منوایا ہے۔ ادب کے لیے ان کے جذبہ اور لگن نے انہیں اردو زبان و ادب کو فروغ دینے والی ایک ادبی تنظیم، عالمی اردو مرکز جدہ کے صدر کے طور پر ایک باوقار مقام دلایا ہے۔ اطہر عباسی کا شاعرانہ انداز اپنی سادگی اور جذباتی گہرائی کے لیے جانا جاتا ہے، جس میں اکثر محبت، روحانیت اور سماجی مسائل کے موضوعات کو شامل کیا گیا ہے۔ نبی اکرم حضرت محمد مصطفیٰ ﷺ کی تعریف میں ان کی نعتیہ شاعری کو قارئین نے اس کے روحانی اور جذباتی اثرات کی وجہ سے بے حد پسند کیا ہے۔ اطہر عباسی کی اپنی شاعری کے ذریعے اپنے قارئین سے جڑنے کی صلاحیت نے انہیں کمیونٹی میں ایک مقبول شخصیت اور شاعروں اور ادیبوں کے لیے ایک رول ماڈل کے طور پر پیش کیا ہے۔

اطہر عباسی کی اردو نظم، “آؤ فلسطین چلتے ہیں،” فلسطین کاز کو اجاگر کرنے کے لیے ایک طاقتور پیغام کے طور پر ہمارے سامنے ہے، جو قارئین کو فلسطینیوں کی مدد کے لیے آگے بڑھنے اور فلسطین میں مثبت تبدیلی کے لیے فعال کردار ادا کرنے کی تلقین کرتی ہے۔ نظم اتحاد پر زور دیتی ہے، ظالموں سے سوال کرتی ہے، اور انصاف کے لیے دی گئی قربانیوں کا احترام کرتی ہے۔ شاعر مصیبت کے درمیان فلسطینی عوام کی لچک کو پیش کرتا ہے، فلسطین کی بھرپور تاریخ اور اہمیت کا مشاہدہ کرنے کے لیے اجتماعی سفر کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔

مرکزی موضوع فلسطین کے لیے یکجہتی اور فعالیت کے گرد گھومتا ہے۔ نظم لوگوں پر زور دیتی ہے کہ وہ مصائب کے غیر فعال مشاہدے سے انصاف کی تلاش میں فعال شرکت کی طرف آگے بڑھیں اور اپنا کردار ادا کریں۔ شاعر تاریخی اور مذہبی حوالوں کو آپس میں جوڑتا ہوا دکھائی دیتا ہے، اور ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے ہونے کی اہمیت پر زور دیتا ہے اور ان لوگوں کی قربانیوں کو تسلیم کرتا ہے جو انصاف کے متلاشی ہیں۔

نظم کی ساخت ایک زبردست پیشرفت کی پیروی کرتی ہے، جس کا آغاز عمل کی دعوت سے ہوتا ہے اور اجتماعی سفر کی طرف بڑھتا ہے۔ یہ تاریخی اہمیت، مذہبی احترام، اور انصاف کے لیے جاری جدوجہد کے موضوعات کو بغیر کسی رکاوٹ کے سامنے لاتا ہے۔ “آؤ فلسطین چلیں” کی دعوت کا اعادہ ایک بہترین نصیحت پیدا کرتا ہے، جس سے شاعر جس عجلت اور اتحاد کو بیان کرنا چاہتا ہے اسے تقویت دیتا ہے۔

عباسی نظم کے جذباتی اثر کو بڑھانے کے لیے ادبی آلات استعمال کرتے ہیں۔ مظلوموں کے خون کا دریا اور فرعون کا ڈوبا ہوا قافلہ جیسے استعارے انصاف کی ناگزیریت کو واضح طور پر واضح کرتے ہیں۔ مذہبی حوالوں کا استعمال، جیسا کہ پیغمبر اسلام حضرت محمد مصطفیٰ ﷺ کے معراج کا سفر، اہمیت کی تہوں کو بڑھاتا ہے، مشترکہ عقائد کے ساتھ وسیع تر قارئین کو اپیل کرتا ہے۔

یہ نظم فلسطینی جدوجہد کے ہمہ جہتی پہلوؤں کو بہترین انداز میں بیان کرتی ہے۔ یہ ایک کال ٹو ایکشن کے ساتھ شروع ہوتا ہے، قارئین کو غیر فعال ہمدردی سے آگے بڑھنے پر مجبور کرتا ہے۔ شاعر نے ہمدردی پیدا کرنے اور ظلم کی انسانی قیمت پر زور دینے کے لیے جذباتی اپیلیں، جیسے غمزدہ ماؤں کی نوحہ خوانی کا استعمال کیا ہے۔

نظم میں تاریخی اور مذہبی حوالے گہرائی میں اضافہ کرتے ہیں اور عصری جدوجہد کو وسیع تر بیانیہ سے جوڑتے ہیں۔ حق کا پرچم لہرانے اور شہادت کے پیالہ کو گلے لگانے کی منظر کشی انصاف کی طرف سفر کے لیے ضروری عزم کو واضح کرتی ہے۔

خلاصہ کلام یہ ہے کہ اطہر عباسی کی نظم “آؤ فلسطین چلیں” روایتی شاعری سے بالاتر بہترین مزاحمتی شاعری ہے، یہ شاعری یکجہتی اور فعالیت کے ایک پُرجوش اظہار کے طور پر ابھرتی ہے۔ نظم کی موضوعاتی خوبی، اس کے ادبی آلات کے سٹریٹجک استعمال کے ساتھ مل کر ایک زبردست فن پارے کا ٹکڑا تخلیق کرتی ہے جو ان لوگوں کی حمایت کرتی ہے جو مصیبت کے وقت مثبت تبدیلی کے خواہاں ہیں۔ اہل ذوق قارئین کے مطالعے کے لیے اطہر عباسی کی نظم اور کھوار تراجم پیش خدمت ہیں۔

“آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو”

چشمِ نم نوحہ لکّھے تو کیا فائدہ

آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو

کھوار:گیور اسپہ اوچے پسہ سف بیسی فلسطینوت، اشروغیچی غیچھ کی نوحہ نیویشیتائے تھے کیہ فائدہ،گیور اسپہ اوچے پسہ سف بیسی فلسطینوت۔

آنکھ خود دیکھ لے

ظلم اور بربریت کی تصویر کو

ایسی تحریک ہو

درد محسوس ہو

مقصدِ زندگی، ایسے حاصل کریں

اپنا خونِ جگر اس میں شامل کریں

لے کے جذبہ نیا

اور عزمِ جواں

یوں بڑھائیں قدم

ایک ہو جائیں ہم

آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو

کھوار:غیچھ تان لوڑار ظلم اوچے بربریتو تصویران، ہݰ تحریک بائے، درد محسوس بائے، زندگیو مقصدو ہݰ حاصل کورانی، تان جگرو لئیان ہیرا شامل کورانی، نوغ جذبہ گنی، ارادہ جوآن بانی، ہموݰ پروشٹی الور قدم، تھے سف اسپہ فلسطینو حقہ ای بام، گیور اسپہ اوچے پسہ سف بیسی فلسطینوت۔

دستِ قاتل جہاں

فتنہِ وقت ہے

اُس کی مکّاریاں

اُس کی سفّاکیاں

ظُلم کی انتہا

خونِ مَظلُوم کا ایک دریا بہا۔۔۔!

اُس میں ڈوبےگا فرعون کا قافلہ ( ان شاءالله)

اور شہیدِ چمن دیکھنے آئیں گے

آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو

کھوار:دنیو قاتل ہوستان سوم جستہ وختو فتنہ دی پروشٹہ شیر،ہیتان مکاری ہیتان ظلم، ظلمو انتہا، مظلومان لئیو ای دریاہ یو ہائے، ہوو غہرک بوئے فرعونو قافلہ (ان شا الله)، تھے شہید چمن لوڑیکو گونی،گیور اسپہ اوچے پسہ سف بیسی فلسطینوت۔

ایک لمحے کو تم

دل فِگارو سنو

صدمہ ہائے جہاں

نوحہ خوانوں سنو

اُن دُکھی ماؤں کے دل کی آواز کو

درد انگیز ، غمناک دل سوز کو

جن کے بچے لہو میں نہائے ہوئے

ظُلم کے روبرو

دیکھئے جستجو

مُشکبو کرکے ارضِ فلسطین کو

مُسکراتے ہوئے نارِ نمرود میں

روشنی لکھتے لکھتے ابھی سو گئے

اُن کے چہرے دمکتے ہوئے پھول سے ۔۔۔

دیکھنے دوستو

آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو

کھوار: ای لمحو بچے اے دلفگاران کار دارور، پورا جہانو صدمان اے نوحہ خانان کار داروور،ہتے غمژو نی ننگینیان ہردیو ہوازان، دردناک اوچے غمژونی ہردیو سوزان،

منتظر ہے جہاں

پہلا قبلہ وہاں

رُک گئے تھے جہاں

سفرِ معراج کے درمیاں

سرورِ دوجہاںﷺ،

خاتم الانبیاءﷺ

آؤ ۔۔۔ ہم تم چلیں

لے کے رختِ سفر

اک کفن

رب کے دربار میں

حاضری کے لئے

اس ادا سے چلیں

حمد کرتے ہوئے

پرچمِ حق ہواؤں میں لہرائیں ہم

اپنے ہاتھوں میں جامِ شہادت لئے

آؤ ہم تم چلیں سب فلسطین کو

متعلقہ خبریں

تازہ ترین