Wednesday, May 29, 2024
homeبنگالسی پی آئی ایم کی قسمت نوجوانوں کے سہارے

سی پی آئی ایم کی قسمت نوجوانوں کے سہارے

کلکتہ
فرحانہ فردوس
سی پی ایم نے اس مرتبہ نوجوانوں لیڈروں کو امیدوار بناکر بی جے پی اور ترنمول کانگریس دونوں کا مقابلہ کررہی ہے ۔سی پی ایم لیڈروں کو امید ہے کہ نوجوانوں لیڈروں کو بڑی تعداد میں امیدوار بنائے جانے سے پارٹی میں نئی جان آئے گی اور زیادہ سیٹوں پر کامیابی بھی ملے گی ۔تاہم پارٹی کے کچھ لیڈروں کا خیا ل ہے کہ اگر ان نوجوان لیڈروں کو پہلے آگ کردیا جاتا تو پارٹی کہیں زیادہ فائدہ ہوتا اب بہت تاخیر ہوچکی ہے تاہم سابق ممبر پارلیمنٹ محمد سلیم کہتے ہیں کہ یہ نوجوان لیڈران 2021کے اسمبلی انتخابات کا رخ موڑ سکتے ہیں ۔
سی پی ایم لیڈروں کا خیال ہے کہ جو ممتا بنرجی یہ دعویٰ کرتی تھیں کہ بنگال میں سی پی ایم کا وجود ختم ہوجائے گا اور دوربین سے بھی نظر آئیں گے اب وہی ممتا بنرجی کو بول رہی ہیں کہ سی پی ایم کو ووٹ دے کر برباد نہ کریں ۔خیال رہے کہ ممتا بنرجی نے آج انتخابی منشور جاری کرتے ہوئے عوام سے اپیل کی ہے کہ ووٹ کو خراب کئے بغیر ترنمو ل کانگریس کوووٹ دیں ۔سی پی ایم لیڈر وں کا کہنا ہے کہ ممتا بنرجی کا یہ بیان ہی ثابت کرتا ہے کہ سی پی ایم کا عروج ہورہا ہے ۔
سی پی ایم نے اس اسمبلی انتخابات میں نوجوانوںکی ایک بڑی تعداد کو میدان میں اتارا ہے ۔ان میں سریجن بھٹا چاریہ، جموڑیہ کی امیدوار اوشی گھوش جو جواہر لال نہر ویونیورسٹی کی طلبا لیڈر ہیں ۔نندی گرام سے میناکشی مکھرجی اور سندیپ مترا شامل ہے ۔ان امیدواروں کے بارے میں ، سی پی ایم کے پولیٹ بیورو کے ممبر محمد سلیم نے کہا کہ سیاست بالکل بھی کھیل نہیں ہے۔ ماضی کی طرح ، ترنمول رہنما نے یہ ظاہر کرنے کی کوشش کی کہ شیر پھر سے گر گیا ہے ، لیکن ان کی حکومت کا رخصت قریب ہی ہے۔ بی جے پی کے گھر میں بہت ساری پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے کہ انہیں نیند آ گئی ہے۔ لوگوں کو اپنے وعدے قابل اعتبار نہیں مل پاتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ لوگ جنگل محل میں امیت شاہ اور جے پی نڈا کی میٹنگ میں نہیں آرہے ہیں۔ مرکز کی بی جے پی حکومت نے وہ تمام وعدے کیوں نہیں کیے جو بی جے پی قائدین گذشتہ چھ سالوں میں کر رہے ہیں۔
سی پی ایم رہنماؤں نے دعوی کیا ہے کہ ان کے نوجوان امیدوار تعلیم اور ملازمت کے تقاضوں کو مدنظر رکھتے ہوئے انتخابات لڑ رہے ہیں۔ لوگ سڑکوں پر کیا کہہ رہے ہیں اس پر یقین کر رہے ہیں۔ لیکن کوئی بھی ترنمول اور بی جے پی پر یقین نہیں کرتا ہے۔محمد سلیم نے بی جے پی پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ ہم عمل کرنے کی بات کر رہے ہیں ، وہ مذہب کی بات کر رہے ہیں۔ ہم دعوی کرتے ہیں کہ وہ ملازمت دیں گے ،لوگوں کےلئے مواقع پیدا کریں گے۔ ہمارے بی جے پی اور ترنمول کے مابین یہی فرق ہے۔ لہذا ہم کہتے ہیں کہ یہ نوجوان نسل مستقبل ہے۔
بدھادیب بھٹاچاریہ ، محمد سلیم ، مانب مکھرجی ، تنموئے بھٹاچاریہ ، سبھاش چکورتی ، انیل بسواس ، موجودہ بائیں بازو کے چیئرمین بمان باسو طلبہ کی تحریک کا نتیجہ ہے۔ تو کون کہہ سکتا ہے کہ آج کے نوجوان سی پی ایم امیدوار مستقبل نہیں ہوسکتے ہیں؟
انہو ں نے کہا کہ عوامی ایشوز پر صرف بائیں بازوں کے امیدوار بات کررہے ہیں ۔ ہر شخص ذاتی حملوں میں مصروف ہے۔ ادھر ، وہ ایندھن کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف سراپا احتجاج ہیں۔ یہ مرکز سرکاری کمپنیوں ، بینکوں ، انشورنس کو کیوں فروخت کررہی ہے؟ بائیں بازو کے لوگ اجلاس میں یہ سوال اٹھا رہے ہیں۔ دوسری طرف ، ریاست کی ترنمول کانگیس کی حکومت نے روزگار مہیا نہیں کیا ، ریاست میں کوئی صنعت نہیں ہے ، نوکری کے لئے رشوت دینی پڑرہی ہے۔محمد سلیم نے کہاکہ بائیں بازو کے رہنمااور امیدوارمسلسل عوامی مسائل کو اٹھارہے ہیں اور لوگوں کی بات سن رہے ہیں ۔

متعلقہ خبریں

ترك الرد

من فضلك ادخل تعليقك
من فضلك ادخل اسمك هنا

تازہ ترین