Wednesday, May 29, 2024
homeہندوستانعدم مساوت میں اضافہ پر مودی حکومت خاموش:کانگریس

عدم مساوت میں اضافہ پر مودی حکومت خاموش:کانگریس

نئی دہلی: لوک سبھا میں اپوزیشن نے الزام لگایا ہے کہ حکومت کی پالیسی سب کو ساتھ لے کر چلنا نہیں ہے اور اس کے فیصلوں سے چند لوگوں کو فائدہ ہو رہا ہے، لہذا معاشرے میں معاشی عدم مساوات بڑھ رہی ہے، لیکن حکومت یہ قبول کرنے کے لئے تیار نہیں ہے کانگریس کے امر سنگھ نے منگل کو لوک سبھا میں ‘فنانس بل 2021’ پر بحث کا آغاز کرتے ہوئے کہا کہ اس حکومت کی سب سے بڑی خامی یہ ہے کہ وہ سچائی کو قبول نہیں کرتی ہے اور ہر کمزوری کو جھوٹ سے پردہ کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کورونا کی وبا سے پہلے ہی ملک کی معاشی صورتحال بہت خراب تھی اور کورونا دور میں اسے بہت نقصان ہوا ہے ، لیکن حیرت کی بات یہ ہے کہ حکومت نے کبھی قبول نہیں کیا کہ ملک کی معاشی حالت بہتر نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ معیشت میں مندی کا رجحان ہے۔ حکومت کے محصولات کی وصولی کا ڈیٹا ہر شعبے میں مستقل گر رہا ہے۔ انکم ٹیکس میں تو محصول ایک لاکھ کروڑ روپے گھٹا ہے اور حکومت ان تمام نقصانات کی تلافی کے لئے تیل وغیرہ پر بہت بڑی ایکسائز ڈیوٹی لگا رہی ہے۔ ایکسائز ڈیوٹی میں اضافے کے ساتھ مہنگائی عروج کو پہنچ رہی ہے، لہذا حکومت کو ایکسائز ڈیوٹی کی بڑھتی ہوئی شرحوں کو فوری طور پر واپس لینا چاہیے۔

امر سنگھ نے کہا کہ ڈیڑھ لاکھ کروڑ کی آمدنی ملک میں پبلک سیکٹر کی صنعتوں سے حاصل ہوتی ہے، لیکن حکومت جس تیز رفتاری سے ان صنعتوں کی نجکاری کر رہی ہے اس سے ملک ڈیڑھ لاکھ کروڑ روپئے کا نقصان ہوگا۔ ان کا کہنا تھا کہ سرکاری شعبے کی صنعتوں (پی ایس یو) کی نجکاری کا عمل شروع کرنے سے پہلے حکومت کو ان اداروں سے ہونے والے محصولات کی تلافی کے لئے بھی انتظامات کرنے چاہیے تھے۔

انہوں نے کہا کہ صحت اور دفاع جیسے اہم شعبوں کے لئے حکومت نے بجٹ میں مناسب انتظامات نہیں کیے ہیں۔ روزگار بڑھانے اور مہنگائی کو کم کرنے کے لئے کوئی اقدام نہیں اٹھایا جارہا ہے۔ دارالحکومت کے اخراجات میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے جس کی وجہ سے ملک کی معیشت کو رفتار نہیں مل رہی ہے۔ حکومت اعداد و شمار کا انکشاف بھی نہیں کر رہی ہے اور سی ایم آئی کے توسط سے حکومت سے آنے والی کچھ معلومات میں کہا گیا ہے کہ کورونا کی وجہ سے کروڑوں ملازمتوں کا نقصان ہوا ہے لیکن حکومت اس کے بارے میں کچھ بتا نہیں رہی ہے۔

شیوسینا کے ونایک راؤت نے کہا کہ دہلی کے کسان تین مہینوں سے دہلی کی سرحد پر بیٹھے ہیں، اس کو حل کیا جانا چاہیے۔ کسان کی آمدنی کو دوگنا کرنا ہے لیکن جو ہوا وہ سب جانتے ہیں۔ حکومت نے سب سے زیادہ بوجھ کسانوں پر ڈالا، اس لئے پٹرول ڈیزل کی قیمت میں اضافہ ہوا۔ کسان کو بااختیار بنانے کی بجائے معذور کردیا گیا ہے۔ کورونا کے نام پر ڈیزل پٹرول پر ٹیکس لگا کر کسانوں پر بوجھ ڈالنا ٹھیک نہیں ہے۔ گھریلو گیس کی قیمت میں اضافے کی وجہ سے لوگوں کو کافی پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ غریب لوگوں نے گیس چھوڑ دی ہے اور دوبارہ لکڑی پر کھانا پکانا شروع کر دیا ہے۔ انہوں نے اشیا اور خدمات ٹیکس (جی ایس ٹی) کے تحت ڈیزل پٹرول کو لانے کی اپیل کی۔ انہوں نے کہا کہ صحت مند ہندوستان کے خواب کو پورا کرنے کے لئے، تمام ملک کے شہریوں کو مفت کورونا ویکسین فراہم کرنے کے انتظامات کرنے چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں : فرفرہ شریف کے عباس صدیقی کا بڑا اعلان، بنگال کے بعد یو پی میں لڑیں گے الیکشن!
انہوں نے کہا کہ ملک میں 6.8 لاکھ کمپنیاں بند ہو گئی ہیں جس کی وجہ سے بے روزگاری میں اضافہ ہوا ہے، اس پر سنجیدگی سے غور کرنے کی ضرورت ہے۔ ہوٹل کا شعبہ بھی شدید پریشانی کا شکار ہے۔ حکومت نے پچاس امیر لوگوں کے 68 ہزار کروڑ معاف کردئے لیکن چھوٹے تاجروں کو کوئی راحت نہیں دی گئی۔ ملک کی 26 سرکاری کمپنیوں کو فروخت کرنے کے پیچھے کیا وجہ ہے؟ حکومت دو افراد کو فائدہ پہنچانے کے لئے کمپنیاں فروخت کرنے پر کام کر رہی ہے۔ عوامی مفاد میں استعمال ہونے والے ایم پی فنڈ کو کورونا کے نام سے ختم کردیا گیا تھا لیکن 7500 کروڑ کے طیارے خریدے گئے تھے۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین