Thursday, May 30, 2024
homeدنیانوم چومسکی اور راج موہن گاندھی نے عمر خالد کی رہائی کی...

نوم چومسکی اور راج موہن گاندھی نے عمر خالد کی رہائی کی مانگ کی، کیا کہا؟

نئی دہلی :(ایجنسی)

معروف دانشور نوم چومسکی اور مہاتما گاندھی کے پوتے راج موہن گاندھی نے دہلی فسادات کے ملزم طلبہ رہنما عمر خالد کی حراست پر سوال اٹھایا ہے اور ان کی فوری رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

عمر خالد کو دہلی پولیس نے ستمبر 2020 میں گرفتار کیا تھا۔ ان دونوں دانشوروں کے علاوہ چار تنظیموں ہندوس فار ہیومن رائٹس، انڈین امریکن مسلم کونسل، دلت سالیڈریٹری فورم اور انڈین سول واچ انٹرنیشنل نے بھی ان کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔

نوم چومسکی نے کہا ہے، ’امتیازی سے بھرے شہریت قانون CAA اور NRC کے خلاف آواز اٹھانے والے عمر پر دہشت گردی اور فسادات بھڑکانے کا الزام ہے۔ بے بنیاد الزامات کے باوجود انہیں طویل عرصے سے جیل میں رکھا گیا ہے۔‘

انڈین امریکن مسلم کونسل کی پریس ریلیز کے مطابق نوم چومسکی نے کہا ہے کہ ’عمر خالد کو گزشتہ ایک سال سے جیل میں رکھا گیا ہے، انہیں ضمانت نہیں دی جا رہی ہے۔ ان کے خلاف واحد ’سخت‘ الزام یہ ہے کہ وہ بولنے اور احتجاج کرنے کے اپنے آئینی حق کا استعمال کررہے تھے۔ یہ کسی بھی آزاد معاشرے کے لیے شہریوں کا بنیادی استحقاق ہے۔‘

امریکہ میں رہنے والے چومسکی نے ایک ریکارڈ شدہ بیان میں کہا کہ میں واقعات اور الزامات کا اتنی دور سے اندازہ نہیں لگا سکتا لیکن ان میں سے بہت سے واقعات نے بھارت کے عدالتی نظام کا برا چہرہ پیش کیا ہے۔اس دوران جبر اور اکثر تشدد کے واقعات نے واضح طور پر ہندوستانی اداروں اور ہندوستانی شہریوں کے حقوق کے استعمال میں رکاوٹ ڈالی ہے۔ یہ ہندوستان میں سیکولر جمہوریت کو نقصان پہنچانے اور ہندو نسل کو مسلط کرنے کی کوشش معلوم ہوتا ہے۔‘

راج موہن گاندھی نے کیا کہا؟
راج موہن گاندھی نے عمر خالد کی رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’بھارت کی جیلوں میں ایسے بہت سے لوگ ہیں، جنہیں نہ تو جلد رہا کیا جا رہا ہے اور نہ ہی انہیں مناسب طریقے سے انصاف مل رہا ہے، یہ بھارت کی جمہوریت ہے، عمر خالد بھی ہزاروں میں شامل ہیں۔ ایسے لوگ جیلوں میں بند ہیں۔‘

انہوں نے کہا، ’عمر خالد ہندوستان کا ایک بہت ہی باصلاحیت نوجوان بیٹا ہے لیکن اسے گزشتہ 20 ماہ سے مسلسل خاموشی سے رکھا گیا ہے، انہیں UAPA کے تحت جیل میں رکھا گیا ہے۔ گزشتہ 20 مہینوں کے دوران انہیں انصاف کا موقع ملا ہے اور عوامی سماعت۔جو انسانی حقوق کے دفاع کے عالمی اعلامیہ کے مطابق ان کا حق ہے۔1948 میں ہندوستان نے بھی اس اعلامیہ پر دستخط کیے تھے۔

امریکن یونیورسٹی آف ایلی نوائے کے ریسرچ پروفیسر راج موہن گاندھی نے کہا، ’عمر خالد اور ایسے ہزاروں لوگوں کو جیل میں رکھنے کا ایک اضافی دن دنیا میں جمہوریت اور انسانی وقار پر چوٹ ہے اور ہندوستان کے وقار کو دھچکا ہے۔‘ وہ آزادی کی کھلی ہوا لے رہے ہیں۔ انہیں ہندوستان کے حقیقی مشن میں حصہ ڈالنے کا حق دیں۔ وہ مشن جو انسانی وقار، آزادی، معیار زندگی اور اتحاد کو بلند کرتا ہے۔‘

انہوں نے کہا کہ آئیے ہم سب عمر اور ان جیسے جیلوں میں بند تمام لوگوں کی رہائی کے لیے سوچنے اور کام کرنے کا عمل جاری رکھیں، ان لوگوں کے لیے جن کا جرم صرف آزادی اور مساوات کے حق کے لیے لڑ رہا ہے۔ انہیں ہندوستان کے آئین کے ذریعہ فراہم کیا گیا ہے۔ان انسانی حقوق کے لئے جو انسانی حقوق کے عالمی اعلامیہ کے ذریعہ لوگوں کو فراہم کیے گئے ہیں۔

خالد کی ضمانت نہیں ہوئی
اس سال 24 مارچ کو دہلی کی ککڑڈوما کورٹ نے دہلی کی جے این یو یونیورسٹی کے سابق طالب علم عمر خالد کو ضمانت دینے سے انکار کر دیا تھا۔

عدالت نے تبصرہ کیا کہ اس مرحلے پر ‘درخواست گزار کو ضمانت دینے کا کوئی میرٹ نہیں ہے۔ 3 مارچ کو ککڑڈوما کورٹ کے ایڈیشنل سیشن جج (اے ایس جے) امیتابھ راوت نے اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔ اس کے بعد فیصلہ 21 مارچ تک ملتوی کر دیا گیا۔ عدالت نے بالآخر 24 مارچ کو اپنا فیصلہ سنایا۔

عمر خالد پر فروری 2020 کے دوران دہلی فسادات کے سلسلے میں مجرمانہ سازش کا الزام ہے۔ اس معاملے میں ان پر یو اے پی اے کی دفعات لگائی گئی ہی

متعلقہ خبریں

تازہ ترین