Wednesday, May 29, 2024
homeہندوستانبنگلور۔ چنئی شتابدی ایکسپریس میں مسافروں انگریزی کا نفرت انگیز اخبار پڑھنے...

بنگلور۔ چنئی شتابدی ایکسپریس میں مسافروں انگریزی کا نفرت انگیز اخبار پڑھنے کو دیا گیا۔ مسافرگوپیگا بخشی کے ٹوئیڈٹ کے بعد ریلوے نے انکوائری شروع کی۔کانگریس کے ممبر پارلیمنٹ کا اس معاملے کو پارلیمنٹ میں اٹھانے کا اعلان

نئی دہلی(انصاف نیوز آن لائن)
مسلمانوں کے خلاف مسلسل نفرت پھیلانے کا سلسلہ جاری ہے۔اس سلسلے کی ایک کڑی آج بنگلور۔چنئی شتابدی ایکسپریس میں اس وقت سامنے آئی جب بنگلو ر ریلوے اسٹیشن پر مسافر سوار ہوئے تو مسلمانوں کے خلاف پروپیگنڈہ پھیلانے اور اکثریتی طبقے کو خوف زدہ کرنے والا انگریزی اخبار The Aryavart Express مسافروں کی سیٹ پر رکھا ہوا تھا۔یہ بات یاد رہے کہ شتابدی، راجدھانی اور دورنتو ایکسپریس میں وہی اخبارات رکھے جاتے ہیں جس کی کمیٹی منظوری دی ہوتی ہے۔مذکورہ اخبار ریلوے کی طرف سے منظور شدہ نہیں ہے۔
دراصل بنگلور میں چنئی کیلئے سوار ہونے والی ایڈوکیٹ گوپیکا بخشی جب سواری ہوئی تو دیکھا کہ ہردوسری سیٹ پر یہ اخبار رکھا ہے جس میں اشتعال انگیز اسٹوری شائع کیا گئی ہے۔پہلی اسٹوری میں لکھا ہے کہ ”اسلامی حکومت کے تحت ہندو، سکھ اور بدھشٹوں کی نسل کشی کا نوٹس لیا جانا چاہیے۔ اس کے علاوہ لکھا گیا ہے کہ اقوام متحدہ کو اورنگیزیب کو ہٹلر کی طرح ہولو کاسٹ کا مرتکب قرار دیاجانا چاہیے۔
یہ اخبار بنگلور سے شائع کیا جاتا ہے۔
ٹرین کے لائسنس یافتہ، پی کے شیفی نے دی انڈین ایکسپریس کو بتایا کہ یہ کاغذ منظور شدہ اخبارات میں وینڈر کے ذریعے داخل کردہ ضمیمہ کے طور پر گردش کر رہا ہے۔ لیکن ایک مسافر جس نے کاغذ پایا اس نے ٹویٹ کیا کہ یہ ”داخل” نہیں تھا۔انہوں نے ٹوئیٹ کیا کہ
”ہمارے بورڈ میں موجود لڑکے جنہوں نے اخبارات تقسیم کیے، وہ یہ نہیں سمجھ پائے کہ اخبارات میں یہ ضمیمہ موجود ہے۔ کسی بھی صورت میں وہ ان اخبارات کا مواد نہیں پڑھتے جو وہ تقسیم کرتے ہیں،“ شیفی نے کہا۔ ”میں نے انہیں ہدایت کی ہے کہ وہ کوئی سپلیمنٹس یا پمفلٹ تقسیم نہ کریں اور اب سے صرف مین پیپر ہی تقسیم کی جائے گی۔“
IRCTC کے منیجنگ ڈائریکٹر نے دی انڈین ایکسپریس کو بتایا ہم نے لائسنس یافتہ اخبارات فراہم کرنے والوں کو خبردار کر دیا ہے۔ معاہدے کے مطابق، لائسنس یافتہ کو صرف دکن ہیرالڈ کی مفت کاپیاں اور کنڑ پیپر فراہم کرنا ہے۔ اسے معاہدے کی شرائط پر قائم رہنا چاہیے۔
جمعہ کی صبح ٹویٹر صارف گوپیکا بخشی نے لکھا ہے کہ
”آج صبح میں بنگلور-چنئی شتابدی ایکسپریس میں سوار ہوئی تو کہ ہر دوسری سیٹ پرایک ایسا اخبار تھا جس میں پروپیگنڈے کے علاوہ کچھ بھی نہیں تھا۔انگریزی اخبار”آریا ورتھ ایکسپریس“ کے بارے میں کبھی سنا بھی نہیں تھا۔ @IRCTCofficial اس کی اجازت کیسے دے رہا ہے؟۔

دیگر صارفین نے بھی اس پر سوالات اٹھائے کہ آیا اسے سرکاری طور پر ریلوے کے زیر کنٹرول کمپنی کی طرف سے گردش کیا جا رہا ہے۔
ٹویٹس کے جواب میں، IRCTC نے کہا کہ اس نے کارروائی کی ہے۔ مذکورہ انگریزی اخبار ”آریہ ورتھ ایکسپریس“ منظور شدہ اخبار نہیں ہے۔اس اخبار منظور شدہ اخبارت کے ضمیمہ کے طورپر داخل کیا گیا تھا۔مستقبل میں اس پر نظر رکھی جائے گی۔ مزید کہا گیا ہے کہ ”آن بورڈ مانیٹرنگ عملہ اس پر کڑی نظر رکھے گا۔ ٹرین کے لائسنس دہندگان کو بھی مشورہ دیا گیا ہے۔’
مسافر، بخشی، نے ٹویٹ کرکے جواب کے لیے آپ کا شکریہ لیکن یہ یقینی طور پرکسی اخبار کے اندر نہیں رکھا گیا تھا جب میں پہنچی تو یہ میری سیٹ اور بہت سی دوسری نشستوں پر یہ اخبار الگ سے رکھا ہوا تھا۔آئی آر سی ٹی سی نے بعد میں اپنے ٹویٹس کو حذف کر دیا۔ اس بارے میں پوچھے جانے پرآئی آرسی ٹی کے ترجمان نیکہا کہ کمپنی اس بات کا جائزہ لے رہی ہے کہ منظور شدہ کاغذات میں اخبارات کیسے داخل ہوئے۔
بنگلورو کے ڈویژنل ریلوے منیجر نے بھی اپنی ٹیم کو اس معاملے پر کارروائی کرنے کی ہدایت دی ہے۔
کانگریس ایم پی مانیکم ٹیگور نے بھی سوال کیا کہ اس طرح کے اخبار کو ٹرین میں تقسیم کرنے کی اجازت کیسے دی گئی۔انہوں نے ٹویٹ کیاکہ کیا ریلوے وزیر اس کی تحقیقات کا حکم دیں گے؟ کیا شتابدی ایکسپریس میں تشہیری مواد کی اجازت دینا (تقسیم) کرنا ریلوے کی وزارت کی سوچی سمجھی پالیسی ہے؟ میں اس مسئلہ کو لوک سبھا میں اٹھاؤں گا۔ بھارت نفرت کے خلاف ہے۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین