اسرائیلی‘ بحری جہاز ایران کے قبضے میں : ایرانی سرکاری میڈیا

ارنا کے مطابق نیوی کی سپیشل فورسز کے سپاہ (گارڈز) نے ہیلی کاپٹر کے ذریے آپریشن کرتے ہوئے ’ایم سی ایس ایریز‘ نامی ایک کنٹینر جہاز کو قبضے میں لے لیا ہے۔

0
40

تہران :ایجنسی

ایران کے سرکاری میڈیا کے مطابق پاسداران انقلاب نے ہفتے کو خلیج میں اسرائیل سے تعلق رکھنے والے ایک کنٹینر جہاز کو قبضے میں لے لیا ہے۔

ارنا کے مطابق نیوی کی سپیشل فورسز کے سپاہ (گارڈز) نے ہیلی کاپٹر کے ذریعے آپریشن کرتے ہوئے ’ایم سی ایس ایریز‘ نامی ایک کنٹینر جہاز کو قبضے میں لے لیا ہے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ’یہ کارروائی آبنائے ہرمز کے قریب ہوئی اور اب اس جہاز کو ایران کی سمندری حدود کی جانب موڑ دیا گیا ہے۔‘

ارنا کا کہنا ہے کہ پاسداران انقلاب کی نیوی کے ایک باخبر ذرائع نے آبنائے ہرمز کے قریب خلیج فارس میں ’صیہونی حکومت سے وابستہ ایک غیر ملکی بحری جہاز کو قبضے‘ میں لینے کی تصدیق کی ہے جبکہ ساتھ ہی بتایا ہے کہ اس حوالے سے مزید تفصیلات جلد جاری کی جائیں گی۔

دوسری جانب خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق وائٹ ہاؤس نے کہا ہے کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے مشرق وسطیٰ کے بارے میں واشنگٹن میں فوری مشاورت کے لیے ہفتے کے روز ڈیلاویئر کا اپنا دورہ مختصر کر دیا ہے۔

وائٹ ہاؤس نے بحری جہاز کو قبضے میں لینے کی مذمت کی ہے۔ امریکی قومی سلامتی کونسل کی ترجمان ایڈرین واٹسن نے کہا کہ ہم ایران سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ جہاز اور اس کے بین الاقوامی عملے کو فوری طور پر رہا کرے۔

انہوں نے کہا کہ بغیر کسی اشتعال انگیزی کے سویلین بحری جہاز پر قبضہ بین الاقوامی قوانین کی صریح خلاف ورزی اور پاسداران انقلاب کی جانب سے قزاقی کا عمل ہے۔

شام میں ایرانی سفارتخانے پر گذشتہ دنوں اسرائیلی حملے کے بعد سے متعدد بار ایران کہہ چکا ہے کہ وہ اس حملے کا ’بدلا‘ لے گا۔

شام میں اسرائیلی حملے کے بعد ایرانی ردعمل کا خدشہ، امریکہ ہائی الرٹ
اس حوالے سے امریکی صدر جو بائیڈن نے بھی جمعے کو کہا تھا کہ انہیں توقع ہے کہ ایران بہت جلد اسرائیل پر حملہ کرے گا۔ تاہم ساتھ ہی انہوں نے ایران کو خبردار کیا ہے کہ وہ ایسے کسی بھی حملے سے باز رہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق میری ٹائم سکیورٹی ایجنسیز نے ہفتے کو بتایا ہے کہ ’متحدہ عرب امارات اور ایران کے درمیان ’علاقائی حکام‘ نے ایک بحری جہاز کو قبضے میں لے لیا ہے۔

یو کے میری ٹائم آپریشنز (یو کے ایم ٹی او) نے کہا ہے کہ بحری جہاز کو فجیرہ کے شمال مشرق میں 50 ناٹیکل میل دور قبضے میں لیا گیا۔ ان کے مطابق یہ علاقہ آبنائے ہرمز کے قریب ہے جہاں سے خلیج میں داخل ہونے کا راستہ بنتا ہے۔