Wednesday, May 29, 2024
homeاہم خبریںغزہ کا مکمل محاصرہ عالمی قانون کے تحت ’غیر قانونی‘ ہے: اقوام...

غزہ کا مکمل محاصرہ عالمی قانون کے تحت ’غیر قانونی‘ ہے: اقوام متحدہ

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے سربراہ نے کہا ہے کہ اسرائیل کا غزہ کی پٹی کا مکمل محاصرہ جس سے شہری زندگی کی بقا کے لیے ضروری اشیا سے محروم ہوجائیں، عالمی قانون کے تحت ممنوع ہے۔

انسانی حقوق کے لیے اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر نے کہا کہ لوگوں کے وقار اور جانوں کا احترام کیا جانا چاہیے، انہوں نے تمام فریقوں سے کشیدگی کم کرنے کا مطالبہ کیا۔

فلسطینی گروپ حماس نے مبینہ طور پر ہفتے کے آخر میں اسرائیل پر اپنے اچانک حملے میں تقریباً 150 افراد کو اغوا کرلیا تھا، اس نے دھمکی دی کہ اگر بغیر کسی وارننگ کے اسرائیلی فضائی حملوں کے ذریعے غزہ کے رہائشیوں کو ’نشانہ بنانے‘ کا سلسلہ جاری رہا تو وہ مغویوں کو موت کے گھاٹ اتار دے گا۔

حماس کی یہ دھمکی پیر کے روز اسرائیل کی جانب سے غزہ کی پٹی کا مکمل محاصرہ کیے جانے کے بعد سامنے آئی جبکہ محاصرے کے نتیجے میں خوراک، پانی اور بجلی کی سپلائی منقطع ہوگئی جس سے بڑھتی مایوس کن انسانی صورت حال کے خدشات جنم لینے لگے ہیں۔

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے سربراہ نے اپنے دفتر کی جانب سے جمع کی گئی معلومات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اسرائیل نے فضائی حملوں میں غزہ میں رہائشی عمارتوں کو نشانہ بنایا ہے جن میں اسکول اور اقوام متحدہ کی عمارتیں بھی شامل ہیں جس کے نتیجے میں شہریوں کی ہلاکتیں ہوئیں۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسیوں کی رپورٹس کے مطابق انہوں نے ایک بیان میں کہا کہ عالمی انسانی قانون واضح ہے کہ شہری آبادی اور شہری اشیا کو بچانے کے لیے مسلسل دیکھ بھال کی ذمہ داری حملوں کے دوران بھی عائد ہوتی ہے۔

اسرائیلی وزیر دفاع کے غزہ کی سخت ناکہ بندی کے اعلان کے جواب میں انہوں نے کہا کہ شہریوں کی زندگیوں کو خطرے میں ڈالنے والے ’محاصرے‘ عالمی قانون کے تحت ممنوع ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ محاصرے کو نافذ کرنے کے لیے لوگوں اور سامان کی نقل و حرکت پر کسی بھی پابندی کو فوجی ضرورت کے تحت جائز قرار دیا جانا چاہیے، بصورت دیگر یہ محاصرہ اجتماعی سزا ہو سکتا ہے۔

اس سے قبل ایک اور رات غزہ پر مسلسل اسرائیلی فضائی حملوں کے بعد اسرائیل نے کہا کہ اس نے غزہ کی سرحد پر دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے اور وہاں بارودی سرنگیں بچھا رہا ہے جہاں حماس نے اپنی کارروائی کے دوران باڑ کو گرا دیا تھا۔

اسرائیل کی جانب سے تازہ ترین فضائی حملے اس وقت کیے گئے جب اس کی فوج نے 30 ہزار ریزرو اہلکاروں کو طلب کرلیا اور غزہ کی پٹی کی مکمل ناکہ بندی کر دی جس کے بعد ان خدشات میں اضافہ ہوگیا کہ اس نے حماس کے دہائیوں کے سب سے بہادرانہ حملے کا جواب دینے کے لیے زمینی کارروائی کا منصوبہ بنا لیا ہے۔

تازین پر تشدد کارروائیوں میں اب تک 15 سو سے زیادہ جانیں ضائع ہوچکی ہیں جب کہ اس دوران اسرائیل کی حمایت میں عالمی اعلانات سامنے آئے، فلسطینیوں کی حمایت میں سڑکوں پر ہونے والے مظاہرے ہوئے اور لڑائی کے خاتمے اور شہریوں کے تحفظ پر زور دیا گیا۔

غزہ کی وزارت صحت نے پیر کے روز کہا کہ حماس کے ہفتے کے روز کے حملوں کے بعد سے محاصرہ شدہ علاقے پر اسرائیلی فضائی حملوں میں کم از کم 687 فلسطینی جاں بحق اور 3ہزار 726 زخمی ہوئے ہیں۔

میڈیا رپورٹس اور عینی شاہدین کے مطابق اپارٹمنٹ بلاکس، مسجد اور ہسپتال بھی حملوں کا نشانہ بننے والے مقامات میں شامل تھے جب کہ سڑکیں اور مکانات بھی تباہ ہوئے۔

اسرائیل نے نجی فلسطینی ٹیلی کمیونیکیشن کمپنی کے ہیڈ کوارٹر پر بھی بمباری کی جس سے لینڈ لائن ٹیلی فون، انٹرنیٹ اور موبائل فون سروسز متاثر ہو سکتی ہیں۔

حملے پیر کی رات تک جاری رہے، اسرائیلی فوج نے کہا کہ اس نے غزہ کی پٹی میں سمندری اور فضائی حملوں سے اہداف کو نشانہ بنایا، غزہ کی ساحلی پٹی پر اسلامی جہاد کے اسلحے کے ڈپو سمیت حماس کے اہداف کو نشانہ بنایا گیا۔

اسرائیلی ٹی وی چینلز کا کہنا ہے کہ حماس کے حملے میں ہلاکتوں کی تعداد 900 تک جا پہنچی ہے جب کہ کم از کم 2 ہزار 600 اسرائیلی زخمی اور درجنوں یرغمال ہیں، ہلاک ہونے والے اسرائیلیوں میں 260 نوجوان بھی شامل ہیں جنہیں میوزک فیسٹیول کے دوران گولی مار کر ہلاک کیا گیا اور وہاں سے کچھ یرغمالیوں کو اغوا کر لیا گیا۔

اسرائیلی آرمی ریڈیو سے نشر ہونے والے بیان میں چیف ملٹری ترجمان نے کہا کہ پیر کے بعد سے غزہ سے کوئی تازہ دراندازی نہیں ہوئی، انہوں نے ان افواہوں کا جواب دیا جس میں کہا گیا کہ جنگجوؤں نے سرحد پار سے سرنگوں کا استعمال کیا، انہوں نے کہا کہ فوج کے پاس ایسی کوئی اطلاع نہیں ہے۔

اقوام متحدہ کے انسانی ہمدردی کے دفتر نے کہا کہ غزہ میں جنگ کے آغاز سے تقریباً 2 لاکھ افراد یا تقریباً دس فیصد آبادی اپنے گھر بار چھوڑ چکی ہے جب کہ ناکہ بندی کی وجہ سے پانی و بجلی کی قلت ہے۔

ترجمان او سی ایچ اے نے جنیوا میں ایک بریفنگ کے دوران کہا کہ غزہ کی پٹی میں نقل مکانی میں ڈرامائی طور پر اضافہ ہوا، ہفتہ سے اب تک تعداد ایک لاکھ 87 ہزار 500 سے زیادہ افراد تک پہنچ گئی ہے جن سے زیادہ تر اسکولوں میں پناہ لے رہے ہیں، جھڑپیں جاری رہنے کے باعث مزید نقل مکانی کا خدشہ ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے ترجمان نے کہا کہ ہفتے کے آخر سے اب تک غزہ کی پٹی میں واقع مراکز صحت پر 13 حملوں کی اطلاعات موصول ہوئیں جب کہ وہاں ذخیرہ شدہ طبی سامان پہلے ہی استعمال کیا جاچکا ہے۔

ترجمان ڈبلیو ایچ او نے جنیوا میں ایک پریس بریفنگ میں بتایا کہ اس دوران ڈبلیو ایچ او نے غزہ کی پٹی کے اندر اور باہر انسانی راہداری قائم کرنے کا مطالبی کیا، ادارہ تشدد کے خاتمے کا مطالبہ بھی کر رہا ہے۔

ایران کی ملوث ہونے کی تردید
ایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای نے حماس کے ہفتے کے آخر میں ہونے والے حملے میں ایران کے ملوث ہونے کی تردید کی ہے۔

آیت اللہ علی خامنہ نے ایک ملٹری اکیڈمی میں تقریر کرتے ہوئے کہا کہ صیہونی حکومت کے حامی اور غاصب حکومت کے کچھ لوگ گزشتہ دو تین روز سے افواہیں پھیلا رہے ہیں کہ اس کارروائی کے پیچھے ایران کا ہاتھ ہے، وہ لوگ غلط ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بلکل ہم فلسطین کا دفاع کرتے ہیں، ہم جدوجہد کا دفاع کرتے ہیں، پوری اسلامی دنیا پر زور دیا کہ وہ فلسطینیوں کی حمایت کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ اسرائیل کو ’فوجی و انٹیلی جنس‘ دونوں محاذوں پر ’ناقابل تلافی ناکامی‘ کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہر ایک نے ناکامی کی بات کی، میں اس ناکامی کے ناقابل تلافی پر زور دیتا ہوں۔

فلسطینیوں نے اطلاع دی کہ انہیں اسرائیلی سیکیورٹی افسران کی طرف سے کالز اور آڈیو پیغامات موصول ہوئے جن میں انہیں غزہ کے شمالی اور مشرقی علاقے چھوڑنے کا کہا گیا اور خبردار کیا گیا کہ فوج وہاں آپریشن کرے گی۔

غزہ شہر کے ریمال محلے میں درجنوں افراد اپنے گھر بار چھوڑ کر بھاگ گئے۔

اسرائیل کے جنوب میں حماس کے حملے کے جواب میں اسرائیل کے فوجی ترجمان نے کہا کہ فوجیوں نے اسرائیل کے اندر ان علاقوں پر دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے لیکن کچھ مسلح افراد کے سرگرم رہنے کی وجہ سے کہیں کہیں جھڑپیں جاری ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے اتنے بڑے پیمانے پر کبھی بھی اتنے زیادہ ریزرو اہلکاروں کو تیار رہنے کا نہیں کہا، ہم جارحانہ کارروائی کرنے جا رہے ہیں۔

اسرائیل کو ہر سال 3 ارب 80 کروڑ ڈالر کی فوجی امداد فراہم کرنے والے واشنگٹن نے کہا کہ وہ اسرائیل کو فضائی دفاع، گولہ باری اور دیگر سیکیورٹی امداد کی تازہ کھیپ بھیج رہا ہے۔

امریکا کے اعلیٰ جنرل نے ایران کو خبردار کیا کہ وہ بحران میں ملوث نہ ہو اور کہا کہ وہ نہیں چاہتے کہ تنازع مزید بڑھے، ایران نے ہفتے کے آخر میں ہونے والے حملے کی تعریف کی لیکن اس میں ملوث ہونے کی تردید کی۔

جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کے چیئرمین جنرل چارلس کیو براؤن نے اپنے ہمراہ برسلز جانے والے صحافیوں کو بتایا کہ ہم بہت مضبوط پیغام دینا چاہتے ہیں، ہم نہیں چاہتے کہ اس کا دائرہ وسیع ہو اور یہ خیال ایران کے لیے ہے کہ یہ پیغام واضح طور پر اس تک پہنچ جائے۔

اٹلی، تھائی لینڈ اور یوکرین سمیت دیگر حکومتوں نے اطلاع دی کہ حماس کے حملوں میں ان کے شہری بھی مارے گئے، واشنگٹن میں صدر جو بائیڈن نے بتایا کہ کم از کم 11 امریکی شہری مارے گئے ہیں اور خدشہ ہے کہ یرغمال بنائے گئے افراد میں بھی امریکی شہری شامل ہیں۔

حماس سے منسلک میڈیا کا کہنا ہے کہ غزہ کی پٹی میں گھروں پر اسرائیلی حملوں میں کم از کم 20 افراد جاں بحق ہو گئے، فلسطینی میڈیا نے یہ بھی رپورٹ کیا کہ غزہ شہر میں ایک عمارت پر اسرائیلی فضائی حملے میں دو فلسطینی صحافی مارے گئے اور تیسرا شدید زخمی ہو گیا۔

رائٹرز فوری طور پر ان رپورٹس کی تصدیق نہیں کرسکا جب کہ اسرائیلی فوج نے بھی فوری طور پر کوئی معاملے پر کوئی رد عمل نہیں دیا۔

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیریس نے کہا کہ تقریباً ایک لاکھ 37 ہزار فراد اقوام متحدہ کی فلسطینیوں کو ضروری خدمات فراہم کرنے والی ایجنسی یو این آر ڈبلیو اے کے پاس پناہ لے رہے ہیں۔

برطانوی، فرانسیسی، جرمن، اطالوی اور امریکی حکومتوں نے مشترکہ بیان جاری کیا جس میں فلسطینی عوام کی ’جائز امنگوں‘ کو تسلیم کیا گیا اور اسرائیلیوں اور فلسطینیوں کے لیے یکساں انصاف اور آزادی کے یکساں اقدامات کی حمایت کی۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ وہ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے متحد اور مربوط رہیں گے کہ اسرائیل خود اپنا دفاع کر سکے۔

مصری صدر عبدالفتاح السیسی اور ان کے ترک ہم منصب رجب طیب اردوان نے حماس اور اسرائیل سے فوری طور پر تشدد بند کرنے اور شہریوں کو تحفظ فراہم کرنے کا مطالبہ کیا۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین