Wednesday, May 29, 2024
homeاہم خبریںیو ایس کیمپس احتجاج: تاریخ نے بار بار دکھایا ہے کہ نوجوان...

یو ایس کیمپس احتجاج: تاریخ نے بار بار دکھایا ہے کہ نوجوان ہمیشہ درست رہے ہیں

اسٹوڈنٹس، جمود سے بیزاری کا اظہار کرتے ہوئے، اپنے خیمے باندھ کر گھر جانے پر مجبور ہو سکتے ہیں – لیکن انہوں نے خود کو سنا ہے۔

’’کوئی کب ہماری مدد کرے گا؟‘‘ اکتوبر 2023میں اسرائیلی بمباری کے پہلے مہینے کے دوران غزہ کے ایک لڑکے نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا یہ جملہ دہرایا تھا۔

زینت خان

اس کے دل دہلا دینے والی درخواست کی ایک ویڈیو ان ان گنت میں سے ایک ہے جو گزشتہ چھ ماہ کے دوران غزہ سے سامنے آئی ہیں۔ لڑکے کی دعاؤں نے پروں کو پھوڑا ہوگا، سمندروں پر اُڑا ہوگا، اور امریکی کالج کے طلباء کے دلوں میں اترگیا۔ ان کی غیر متزلزل حمایت نے طویل المدت فلسطینیوں کو آواز دی ہے۔

نیویارک کی کولمبیا یونیورسٹی میں طلباء نے 17 اپریل کو کیمپس کے لان میں خیمے لگاتے ہوئے ایک کیمپ شروع کیا تھا۔ اس کے بعد سے فلسطینیوں کی یکجہتی ریلیوں کی گرفت میں یونیورسٹی کیمپس کی نشاندہی کرنے والے سرخ پنوں نے ریاستہائے متحدہ کے نقشے کو بھر دیا ہے۔ اب تک ملک بھر میں نو سو طلبہ کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔ یونیورسٹی کی رہائش گاہوں سے معطل اور نکالے جانے والوں کی تعداد ہر گھنٹے بڑھ جارہی ہے۔ کریک ڈاؤن جتنا سخت ہورہا ہے، ریلیوں میں شرکت کرنے والوں کاٹرن آؤٹ اسی اعتبار سے اضافہ ہورہا ہے۔

پولیس افسران کی غیر مسلح طلباء اور فیکلٹی ممبران کو زمین پر گرانے کی پریشان کن ویڈیو فوٹیج کی وجہ سے سوشل میڈیا پر سیلاب آ گیا ہے۔ ٹیکساس کے گورنر نے آسٹن یونیورسٹی میں احتجاج پر قابو پانے کے لیے ریاستی فوج کو طلب کرلیا۔ گھوڑوں پر سوار، ہنگامہ آرائی میں ملبوس دستے پلے کارڈ تھامے طلباء پر چڑھ گئے۔ یہ منظر بائبل کے ڈیوڈ کی یاد تازہ کر رہا تھے جس کا سامنا ایک گلیل کے ساتھ دیو ہیکل گولیتھ کا تھا۔

تاریخ نے ہمیں بار بار دکھایا ہے کہ نوجوان ہمیشہ درست رہے ہیں۔ آخری بار جب بڑے پیمانے پر کیمپس مظاہروں نے ریاست ہائے متحدہ کو ہلا کر رکھ دیا تھا وہ 1960 کی دہائی کے آخر میں واپس آیا تھا جب طلباء نے ویتنام جنگ کے خلاف احتجاج کیا تھا۔ ستم ظریفی یہ ہے کہ کولمبیا یونیورسٹی ہی تھی جس نے اس وقت بھی اس تحریک کی قیادت کی۔

کولمبیا کو انسٹی ٹیوٹ آف ڈیفنس اینالائسز سے جوڑنے والی ایک حادثاتی دریافت، جو کہ ہتھیاروں پر تحقیق کرنے والے تھنک ٹینک ہے، طالب علموں کو یہ مطالبہ کرنے پر مجبور کرتی ہے کہ یونیورسٹی اس تنظیم سے اپنی ادارہ جاتی رکنیت واپس لے۔


امریکی طلباء کے مطالبات ان میں سب سے اہم یہ ہے کہ ان کی یونیورسٹیاں غزہ کی جنگ میں شریک کمپنیوں سے اپنی سرمایہ کاری واپس لے لیں۔ وہ یہ بھی چاہتے ہیں کہ ان کی یونیورسٹیوں کا اسرائیل کی یونیورسٹیوں سے وابستگی ختم ہو جائے اور کیمپس میں فلسطینیوں کے حامی آوازوںپر جبر کو ختم کیا جائے۔

طلباء قابل تعریف ہمت اور مثالیت کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ معطل ہونے والوں میں سے کچھ اپنی گریجویشن کی تقریبات سے ہفتوں دور تھے۔ اکتوبر اور اپریل کے درمیان اسرائیل نے غزہ کی تمام یونیورسٹیوں اور اسکولوں کو تباہ کر دیا ہے اور متعدد ماہرین تعلیم کو ہلاک کر دیا ہے۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو اقوام متحدہ کی متعدد قراردادوںجن میں تحمل سے کام لینے کی ہدایت دی گئی تھی کو ٹھکراچکے ہیں ۔اسی طرح بین الاقوامی انصاف عدالت کی اپیل جن میں مقبوضہ غزہ کی پٹی میں فلسطینیوں کو نسل کشی کے خطرے سے بچانے کے لیے فوری اور موثر اقدامات کرنے اور انسانی ہمدردی کی بنیاد پر امداد اور بنیادی خدمات کو فعال کرنے کی اپیل کی گئی ہے کو نامنظور کرچکے ہیں ۔

حیرت کی بات نہیں ہے کہ اسرائیل کے خلاف احتجاج کرنے والے طلبا پر ’’یہود مخالف کا لیبل لگایا جارہا ہے اور انہیں 1930 کی دہائی میں جرمنی کے کیمپس میں ہونے والے مظاہروں سے تشبیہ دی جارہی ہے۔ امریکہ میں احتجاج کرنے والے طلباء میں بڑی تعداد یہودی طلبا کی بھی ہے۔ وہ نسل کشی اور اسرائیلی قبضے کی مذمت کرتے ہیں جو ان کے عقیدے کو ناپاک کرتے ہیں۔

امریکیوں کے اسرائیل کو دیکھنے کے انداز میں نسلی تقسیم واضح ہے۔ کئی دہائیوں سے اسرائیل کے لیے مسلسل حمایت واشنگٹن کی ڈیفالٹ پوزیشن رہی ہے۔ لیکن 30 سال سے کم عمر کے امریکی جانتے ہیں کہ اکیڈمی سے باہر کی دنیا ان کے لیے اتنی گلابی نہیں ہوگی۔

اعلیٰ یونیورسٹیوں کے فارغ التحصیل طلبا کے قرضوں اور مکانات کے بڑھتے ہوئے اخراجات سے دوچار ہیں۔ ممکنہ آجر ہیلتھ انشورنس کی پیشکش نہیں کر سکتے ہیں۔ وہ اسرائیل کی جنگی مشین کی مالی اعانت کے لیے اربوں ٹیکس ڈالرز کے استعمال سے ناراض ہیں اور اپنی آواز اٹھانے سے نہیں ڈرتے۔

فلسطین ہمیشہ سے ایک عرب یا مسلمان سے بڑا مسئلہ رہا ہے۔ پچھلے چھ مہینوں کے واقعات نے ان ممالک میں اظہار رائے کی آزادی کی کمی کو بے نقاب کیا ہے جو خود کو جمہوری ہونے پر فخر کرتے ہیں۔ غزہ پر حملے نے سیاستدانوں کی منافقت اور بڑے اداروں کے لالچ کو بھی بے نقاب کیا ہے۔

دنیا بھر کے نوجوان جمود سے بیزاری کا اظہار کر رہے ہیں۔ گزشتہ چند دنوں کے دوران، غزہ کی تباہی کے خلاف احتجاج کرنے والے کیمپ کینیڈا کے کالج کیمپس میں پھوٹ پڑے ہیں۔ پیرس میں سائنسز پو میں طلباء نے یونیورسٹی کی ایک پوری عمارت پر قبضہ کر لیا۔ کویت، اردن، ترکی اور الجزائر کے طلباء نے غزہ کے لیے اپنی تحریکیں شروع کر دی ہیں۔

امریکی یونیورسٹیوں کے تعلیمی سال کے اختتام پر، طلباء مظاہرین کو صرف اپنے خیمے باندھ کر گھر جانے پر مجبور کیا جا سکتا ہے۔ لیکن انہوں نے خود کو سنا ہے۔ وائٹ ہاؤس جانتا ہے کہ وہ ایک غیر مقبول جنگ کی مدد کر رہا ہے اور اسے ختم کرنے کی چابیاں ہمیشہ اس کے ہاتھ میں رہی ہیں۔

ان تمام لوگوں کے لیے جنہوں نے غزہ میں دشمنی کے خاتمے کا مطالبہ کرنے کے لیے گرفتاری دی اور اپنا مستقبل داؤ پر لگایا، ان کی قربانیاں قابل قدر ہوں گی۔ انہوں نے یقیناً غزہ والوں کی خیر خواہی حاصل کی ہے۔ رفح میں خیمے میں رہنے والوں کی تصاویر، طلباء کے شکریہ کے اسپرے پینٹنگ کے پیغامات کا انٹرنیٹ پر سیلاب آ گیا ہے۔

امریکی مورخ ہاورڈ زن، جو طلباء میں مقبول ہیں نے وضاحت کی کہ احتجاج اسٹیبلشمنٹ کو اتنا پریشان کیوں کرتا ہے؟۔ وہ کہیں گے کہ ہم امن کو خراب کر رہے ہیں، لیکن جو ’’چیز انہیں واقعی پریشان کررہی ہے وہ یہ ہے کہ ہم جنگ کو پریشان کر رہے ہیں‘‘

متعلقہ خبریں

تازہ ترین