Thursday, May 30, 2024
homeاہم خبریںبہار میں اردو میڈیم اسکولوں میں جمعہ کی ہفتہ وار تعطیل کو...

بہار میں اردو میڈیم اسکولوں میں جمعہ کی ہفتہ وار تعطیل کو ایشو بناکر تنازع کھڑا کرنے کی کوشش– حجاب کے مسئلے ایشو بنانے میں ناکامی کے بعد ہندوتنظیمیں جمعہ کی چھٹی کے نام پر پولرائز کررہے ہیں

پٹنہ (رضوان الحق قاسمی)
کرناٹک کی طرح بہار میں ہندو دائیں بازو سے وابستہ تنظیمیں اور لیڈران حجاب کا مسئلہ اٹھانے میں ناکام رہی ہے ۔چناں چہ اب ان لوگوں نے مسلم اکثریتی علاقوں واقعے اسکولوں میں جمعہ کو ہفتہ وار تعطیل کا مسئلہ اٹھاکر اس پورے مسئلے کو فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوشش کررہے ہیں ۔ظاہر ہے کہ اس کا مقصد سیاسی فائدہ حاصل کرنے اور ریاست میں نتیش کمار حکومت کو غیر مستحکم کرنے کے لیے مذہبی خطوط پر پولرائزکرنا ہے۔
جن اسکولوں میں جمعہ کو ہفتہ وار تعطیل ہوتی ہے وہ زیادہ تر سیمانچل علاقے میں واقع ہیں جن میں چار اضلاع کشن گنج، ارریہ، پورنیہ اور کٹیہار شامل ہیں جہاں مسلمانوں کی آبادی کافی زیادہ ہے۔بہار کے علاوہ جھار کھنڈ میں بھی کئی ایسے اسکول ہیں جہاں جمعہ کو ہفتہ وار تعطیل ہوتی ہے۔اس ایشو ز کو اٹھانے میں ہندتو کے ایجنڈے پر چلنے والے اخبارات پیش پیش ہیں۔
اس سال فروری میں بہار کے وزیر اعلیٰ نتیش کمار سے میڈیا اہلکاروں نے حجاب تناز ع سے متعلق سوال کیا توانہوں نے اس معاملے کو غیر ضروری قرار دیتے ہوئے پوچھا تھا، ’’جب کوئی چہرہ ڈھانپ کر اسکول آتا ہے تو کیا ہوتا ہے؟ یہاں تک کہ ہم چہرے کے ماسک پر اصرار کرتے ہیں۔نتیش کمار کے اس بیان کے بعد حجاب کا مسئلہ اسی وقت وہیں دم توڑ گیا۔
اب، کچھ اردو میڈیم اسکولوں میں تعطیلات منانے کے دہائیوں پرانے نظام کو کہیں کا مسئلہ نہیں بنایا جا رہا ہے۔ نتیش کمار کی پارٹی جے ڈی یو کے ایک سینئر رکن اوپیندر کشواہا نے ٹویٹ کیا کہ یہ لیڈروں کا مقصد نہیں ہونا چاہئے کہ وہ مسائل کو بے بنیاد بنا دیں۔ انہوں نے سوال کیا تھا کہ کیا اردو اسکول کی ہفتہ وار تعطیل ایک حقیقی مسئلہ ہے یا غیر ضروری تنازع کھڑا کرنے کی کوشش ہے۔مسٹر کشواہا نے بنیاد پرست ہندو رہنماؤں سے یہ بھی پوچھا کہ ”وہ سنسکرت کالجوں کے بارے میں کیا سوچتے ہیں جہاں پرتیپتا اور اشٹمی (بالترتیب ہندو مہینے کے پہلے اور آٹھویں دن) چھٹیاں منائی جاتی ہیں”۔ اس نے ان سنسکرت کالجوں کے کیلنڈر کو بھی ٹیگ کیا۔
اس سے قبل بی جے پی کے بہار کے ایم ایل اے نیرج کمار ببلو نے پوچھا تھا کہ اگر ہندو منگل (منگل کو ایک مقدس دن سمجھا جاتا ہے) پر ہفتہ وار تعطیل کا مطالبہ کرتے ہیں۔ ان کے ساتھ آر ایس ایس کے ’تھنک ٹینک‘ کے رکن راکیش سنہا شامل ہیں جنہوں نے ٹی وی چینلز پر بی جے پی کا دفاع کیا ۔ان کا تعلق بہار کے بیگوسرائے سے ہے۔ انہوں نے دلیل دی ہے کہ ایک مسلم ملک ترکی میں بھی جمعہ کو ہفتہ وار تعطیل نہیں ہوتی۔ بابل اور سنہا دونوں نے کہا کہ مذہب کے نام پر ہفتہ وار چھٹی درست بات نہیں ہے۔ مسٹر ببلو نے الزام لگایا کہ یہ پی ایف آئی (پیپلز فرنٹ آف انڈیا) جیسی تنظیمیں ہیں، جن کے اراکین پر حال ہی میں پھلواری شریف، پٹنہ میں درج کی گئی F.I.R میں ملک مخالف سرگرمیوں کا الزام لگایا گیا ہے اور اب NIA نے ان پر قبضہ کر لیا ہے) جو جمعہ کو چھٹی پر اصرار کرتے ہیں۔
روزنامہ جاگرن میں پہلی بار 23 جولائی کو یہ اطلاع ملی تھی کہ بہار کے واحد مسلم اکثریتی ضلع کشن گنج میں 19 اسکول ہیں جہاں ہفتہ وار چھٹی جمعہ کو ہوتی ہے اور اتوار کو وہاں کام کا دن ہوتا ہے۔ اسی اخبار نے اپنے 28 جولائی کے شمارے میں اس تعداد کو بڑھا کر 37 کر دیا۔ اس اخبار نے خود ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر (ڈی ای او) سبھاش کمار گپتا کا یہ بیان شائع کیا تھا کہ ان اسکولوں میں شروع سے ہی ہفتہ وار تعطیل کے لیے جمعہ کا دن مقرر تھا۔
روزنامہ بھاسکر کے مطابق، سیمانچل میں 217 اسکول ہیں جہاں جمعہ کو ہفتہ وار تعطیل ہوتی ہے۔ اس نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ متعلقہ عہدیداروں کی میٹنگ اس مسئلہ پر تبادلہ خیال کے لئے طے کی گئی تھی کیونکہ ایڈیشنل چیف سکریٹری (تعلیم) دیپک کمار نے اس تنازعہ پر رپورٹ طلب کی ہے۔
جے ڈی یو کے ایم ایل سی خالد انور کا کہنا ہے کہ یہ ایک غیر ضروری تنازعہ ہے اور وہ اسکول جمعہ کو ہفتہ وار تعطیل جاری رکھیں گے۔ انہوں نے کہا، ”یہ اسکول مینجمنٹ کمیٹی ہے جو اس طرح کے معاملات پر فیصلہ کرتی ہے۔ اگر انہیں کوئی مسئلہ نہیں ہے تو یہ تنازعہ کیوں کھڑا کیا جا رہا ہے؟
جھارکھنڈ میں اردو اسکولوں میں جمعہ کی چھٹی کو لے کر تنازع شروع ہوگیا۔ ایک ہندی روزنامہ نے جھارکھنڈ کے گدھوا ضلع سے ایک خبر شائع کی، جس میں الزام لگایا گیا کہ مسلم کمیونٹی نے اسکول انتظامیہ کو صبح کی نماز تبدیل کرنے پر مجبور کیا ہے۔ اس کے بعد اخبار نے جمتارہ ضلع کے بارے میں لکھا جہاں اس نے الزام لگایا کہ کئی عام اسکولوں کو اردو اسکول قرار دیا گیا ہے۔
جھارکھنڈ میں، وزیر اعلیٰ ہیمنت سورین غیر قانونی کان کنی لیز کیس میں مبینہ طور پر ملوث ہونے کے لیے بہت زیادہ دباؤ میں ہیں۔ لہذا، بی جے پی اور اس کا ماحولیاتی نظام حکومت کو غیر مستحکم کرنے اور اپنے مسلم مخالف ایجنڈے کو نافذ کرنے کی بھرپور کوشش کر رہا ہے۔ دوسری طرف بہار میں نتیش کمار کو بھی بی جے پی کی جانب سے عہدہ چھوڑنے کا چیلنج درپیش ہے کیونکہ اس کے پاس ایم ایل اے کی تعداد زیادہ ہے۔ بی جے پی کے پاس 77 ایم ایل اے ہیں جب کہ جے ڈی یو کے پاس 45 ہیں۔ چونکہ بی جے پی 2024 اور 2025 کے اگلے انتخابات کے لیے تیاری کر رہی ہے، اس کے لیڈر زیادہ شدت کے ساتھ ایک جنون اور مذہبی پولرائزیشن پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین