Friday, July 19, 2024
homeہندوستانبنگلہ دیش اور نیپال سے متصل سرحدی اضلاع میں مسلم آبادی میں...

بنگلہ دیش اور نیپال سے متصل سرحدی اضلاع میں مسلم آبادی میں اضافہ کا پولس کا دعویٰ

نئی دہلی (انصاف نیوز آن لائن)
نومبر 2021میں منعقد سالانہ پولس کانفرنس جس کی صدارت وزیر اعظم مودی نے کی تھی میں ایک رپورٹ پیش کی گئی ہے جس میں یہ دعویٰ کیا ہے کہ نیپال اور بنگلہ دیش سے متصل بین الاقوامی سرحد کے ساتھ واقع اضلاع میں آبادیاتی تبدیلی بڑے پیمانے پر ہوئی ہے ۔میٹنگ میں، اتر پردیش پولیس اور آسام پولیس نے مساجد، مدارس کی تعداد میں اضافے اور ان علاقوں میں آبادی میں اضافے سے متعلق رپورٹ پیش کی تھی۔
چوں کہ کورونا وائرس کی وجہ سے مردم شماری کی مشق معلق ہے ۔تاہم یہ واضح نہیں ہے کہ پولس نے یہ دعویٰ کن بنیادی پر پیش کیا گیا ہے ۔
سرحدی علاقوں میں آبادیاتی تبدیلیوں کے بارے میں آسام پولیس کے مقالے میں کہا گیا ہے کہ 31.45 فیصد آبادی میں 2011 سے 2021 تک، بنگلہ دیش کی سرحد کے 10 کلومیٹر کے اندر بالترتیب 12.5 فیصد اور 13.54 فیصد کی متوقع قومی اور ریاستی اوسط سے زیادہ آبادی میں اضافہ ہوا ہے۔
چار سرحدی اضلاع – دھوبری، کریم گنج، کیچھر اور جنوبی سلمارہ – میں ہندو آبادی 2011 میں 1,33,240 سے بڑھ کر 2021 میں 1,77,141 ہوگئی، جو کہ 32.9 فیصد کا اضافہ ہے۔مذکورہ دہائی میں چار اضلاع میں مسلمانوں کی آبادی میں 29.6 فیصد کی شرح سے اضافہ ہوا۔ 2011 میں مسلمانوں کی کل تعداد 3,95,659 تھی جبکہ 2021 میں یہ بڑھ کر 5,13,126 ہوگئی۔مقالہ میں کہا گیا ہے کہ یہ تعداد ووٹر لسٹوں، 2011 کی مردم شماری، مقامی پولیس کے پاس دستیاب ریکارڈ اور گاؤں کی پنچایتوں کے ذریعہ موجودہ آبادی کے اعداد و شمار کی بنیاد پر حاصل کی گئی تھی۔مقالے میں کہا گیا ہے کہ آبادی میں اضافے کی وجوہات جاننے کے لیے ایک جامع سماجی تجزیہ کرنے کی ضرورت ہے۔ سماجی اور ثقافتی مماثلت کی وجہ سے سیکورٹی اہلکاروں کے لیے قانونی اور غیر قانونی تارکین وطن میں فرق کرنا مشکل ہے۔
30 نومبر، 2021 کو، بارڈر سیکورٹی فورس (BSF) کے ڈائریکٹر جنرل پنکج کمار سنگھ نے کہا تھا کہ آسام اور مغربی بنگال کے بعض سرحدی اضلاع میں آبادیاتی تبدیلیاںہورہی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اسی وجہ سے بی ایس ایف کے دائرہ اختیار میں اضافہ کردیا گیا ہے۔
مسٹر سنگھ نے کہا کہ 2011 کی مردم شماری آبادیاتی تبدیلیوں کی عکاسی کرتی ہے اور ”بنگال اور آسام میں آبادیاتی توازن بدل گیا ہے جس کی وجہ سے لوگوں میں ناراضگی ہے ۔پڑوسی سرحدی اضلاع میں ووٹنگ کا انداز بدل گیا ہے …
مرکزی وزارت داخلہ نے 11 اکتوبر 2021 کو آسام، مغربی بنگال اور پنجاب کی ریاستوں میں بین الاقوامی سرحد سے 50 کلومیٹر کے اندر ”گرفتاری، تلاشی اور ضبط کرنے” کے بی ایس ایف کے اختیارات میں اضافہ کیا تھا۔ اس سے قبل بی ایس ایف کی حد15 کلومیڈر مقرر کی گئی تھی۔ گجرات میں بین الاقوامی سرحد سے 80 کلومیٹر اور راجستھان، پنجاب، مغربی بنگال اور آسام میں 15 کلومیٹر تک تھی۔
اتر پردیش پولیس کی رپورٹ میں کہا گیا کہ ہند-نیپال سرحد پر چند اضلاع میں ہندوؤں، مسلمانوں اور سکھوں کی مخلوط آبادی ہے۔ سرحدی علاقوں میں عام طور پر آبادی میں اضافہ قومی اوسط سے زیادہ ہے اور سرحدی دیہات میں مسلمانوں کی آبادی میں مسلسل اضافہ ہوا ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ ان پٹ سے پتہ چلتا ہے کہ پچھلے کچھ سالوں میں مساجد اور مدارس (مدرسوں) کی تعداد میں نمایاں اضافہ سرحد کے دونوں طرف آبادیاتی تبدیلی کے نتیجے میں ہونے کی تصدیق کرتا ہے۔
اس میں کہا گیا ہے کہ مہاراج گنج، سدھارتھ نگر، بلرام پور، بہرائچ، شراوستی، پیلی بھیت اور کھیری کے سات سرحدی اضلاع کے 1,047 گاؤں میں سے 303 گاؤں میں 30 سے ??50فیصد کے درمیان مسلم آبادی تھی، جب کہ 116 گاؤں میں 50 سے زیادہ مسلمانوں کی آبادی تھی۔
سرحدی اضلاع میں مساجد اور مدارس کی کل تعداد فروری 2018 میں 1,349 تھی جو ستمبر 2021 میں بڑھ کر 1,688 ہوگئی، جو کہ 25 فیصد اضافہ ہے۔ پولیس فورسز نے مشورہ دیا کہ تبدیلیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے موجودہ انٹیلی جنس گرڈ کو بڑھانے کی ضرورت ہے اور خاص طور پر اتر پردیش، مغربی بنگال، آسام کے سرحدی علاقوں میں مزید پولیس اسٹیشن قائم کیے جائیں۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین