آسام :مسلم تاجر غیر قانونی طریقے سے حراست میں لے کر سینئر پولس افسران کے ذریعہ 2.5کروڑ روپے نہیں دینے پردہشت گردی کے الزام میں پھنساکر انکائونٹر کرنے کی دھمکی

0
72

گوہاٹی (ایجنسیاں)
آسام کے ضلع بجالی میں مسلم تاجر نے الزام عائد کیا کہ ایک آئی پی ایس آفیسر اور دیگر سینئر افسران نے انہیں غیر قانونی پر حراست میں لے کر 2.5کروڑ روپے کا مطالبہ کیا نہیں دینے پر انکائونٹر میں مارنے یا پھر دہشت گردی کے الزامات پھنسانے کی دھمکی دی گئی ۔یہ معاملہ سامنے آنے کے بعد آسام کے کرائم انویسٹی گیشن ڈپارٹمنٹ نےآئی پی ایس افسر اور پانچ دیگر پولیس اہلکاروں سمیت نو افراد کو گرفتار کیا ہے۔

انڈین ایکسپریس نے منگل کو اطلاع دی کہ تاجر ربیع الاسلام نے الزام لگایا کہ بجلی ضلع میں پولیس نے اسے غلط طریقے سے حراست میں لیا اور اسے 2.5کروڑ روپے ادا کرنے کا مطالبہ کیا ۔
اسلام نے الزام لگایا کہ پولیس والوں نے اسے ’’انکاؤنٹر‘‘ میں مارنے کی دھمکی دی اور ’پاکستانی اور بنگلہ دیشی جہادی عناصر کے ساتھ روابط‘ کا الزام لگا کر قتل کرنے کی دھمکی دی گئی ۔

انڈین ایکسپریس کے مطابق، گرفتار شدگان میں 2014 بیچ کے آئی پی ایس افسر سدھارتھ برگوہن، ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (HQ) پشکل گوگوئی، ایڈیشنل سپرنٹنڈنٹ آف پولیس گایتری سونووال، ان کے شوہر سبھاس چندر، سب انسپکٹر دیباجیت گری اور کانسٹیبل انجام الحسن شامل ہیں۔

گرفتار کیے گئے تین دیگر افراد میں ایک کشور بروہ اور پولیس ڈرائیور نبیر احمد اور ڈپجوئے کلیتا شامل ہیں۔

اپنی شکایت میں، اسلام نے الزام لگایا کہ پولیس افسران نے اسے کم از کم دو سے تین گھنٹے تک گھونسے اور لاتیں ماریں، بغیر وارنٹ کے اس کے گھر کی تلاشی لی، اور بہت سے سامان لے گئے۔

انہوں نے مجھے بھاگنے کو کہا، اور انہوں نے مجھے بتایا کہ وہ پولیس کے ڈائریکٹر جنرل، آسام کی ہدایت کے مطابق اپنی ہینڈگن سے مجھے گولی مار دیں گے۔ اس وقت ایک اور شخص جو ایک دوسری کار سے نیچے آیا، جو ہمارا پیچھا کر رہا تھا، میرے قریب آیا اور مجھ سے ہندی میں کہا کہ یہ مان لو کہ میرے جہادی عناصر سے تعلقات ہیں اور میں نے اپنی تمام جائیدادیں غیر قانونی طور پر حاصل کی ہیں۔

(پولیس اہلکار) نے ایک ہاتھ سے بندوق نکالی اور مجھے گولی مارنے کی کوشش کی اور مجھ سے 2.5 کروڑ روپے کا مطالبہ کیا۔ اس نے مجھے بتایا کہ وہ ایک انکاؤنٹر اسپیشلسٹ ہے اور اگر میں نے مذکورہ رقم ادا نہیں کی تو وہ مجھے مار ڈالے گا اور پولیس یہ ظاہر کر کے یہ ایک انکاؤنٹر ہے کہ میرے پاکستانی اور بنگلہ دیشی جہادی عناصر کے ساتھ روابط ہیں۔