Thursday, May 30, 2024
homeہندوستانگرائونٹ رپورٹگروگرام کے بادشاہ پور میں فرقہ وارانہ تشدد کے بعد سینکڑوںمسلمان فرار...

گروگرام کے بادشاہ پور میں فرقہ وارانہ تشدد کے بعد سینکڑوںمسلمان فرار ہونے پر مجبور

زیادہ تر مسلم تارکین وطن اپنے خاندانوں کے ساتھ بادشاہ پور میں رہتے تھے، تشدد کی وجہ سے راتوں رات بھاگنے پر مجبور ہوئے۔ ان میں سے ایک نے کہا کہ اسے کبھی اندازہ نہیں تھا کہ نوح کا تشدد جو 50 کلومیٹر دور ہواتھا ان پر بھی اثر ڈالے گا۔

گروگرام (ہریانہ ) انصاف نیوز آن لائن
گروگرام کے مضافاتی علاقہ بادشاہ پور میں ’’مہک اسٹور ‘‘ اپنی نوعیت کا واحد اسٹور ہے۔اس دوکان کو محمد شاہد کے نام کا شخص چلاتاتھا جب کہ دوکان کے مالک کا نام سریندر ہے۔س دکان میں سستے گدے اور تکیے، فولڈنگ بیڈ، اور واٹر کولر فروخت کیے جاتے تھے۔منگل کی دوپہر، یکم اگست کو، ایک ہجوم نے یہ سمجھ کر تباہ کردیا کہ اس دوکان کا مالک مسلمان ہے۔اس دوکان میں نہ صرف توڑ پھوڑ کی گئی تھی بلکہ دوکان کو لوٹ لیا گیا۔
ایک راہ گیر نے بتایا کہ ایک بھیڑنے جے شری رام کے نعرے لگاتے ہوئے دوکان میں توڑ پھوڑ کی اور ہرایک چیز چرا کر لے گے ۔تقریباً 150-200 لوگ تھے۔ انہوں نے لاٹھیاں (لاٹھیاں) اٹھائیں اور زیادہ تر دکانوں کو نشانہ بناتے رہے جن کے بارے میں ان کے خیال میں مسلمانوں کی ملکیت تھی۔

مہک کاٹن کی دکان میں ہجوم نے توڑ پھوڑ کی۔ تصویر: اجوئے آشیرواد مہاپرشتا

بادشاہ پورہندواکثریتی گائوں ہے مگر کچھ دوکانیں یہاں مسلمانوں کی بھی تھی ۔جنہیں پیر 31 جولائی کو نوح میں فرقہ وارانہ فسادات کے بعد ہندوتوا کارکنوں کے غصے کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

گلی کے اس پار، ایک جوس کی دکان پوری طرح سے منہدم ہو گئی تھی، اور اسی طرح ایک ڈھابہ (کھانے کی جگہ) اور ایک کاؤنٹر تھا جس میں کہا گیا تھا کہ “عرفان پہلوان”، جو جسم کے پرانے درد کا علاج کرنے کا دعویٰ کرتا تھا۔

کپاس کی دکان کے شیڈ کی توڑ پھوڑ۔ تصویر: اجوئے آشیرواد مہاپرشتا

تقریباً 200 میٹر دور، گاؤں کے ایک اور سرے پر، ہجوم نے اس سے بھی بڑا تباہی مچا ئی ہے۔ اس نے ایک سکریپ کی دکان، ایک اور ڈھابہ، اور ٹین کے متعدد مکانات کو آگ لگا دی جو پچھلے کچھ سالوں میں تارکین وطن کے گھر تھے۔ زیادہ تر رہائشی اپنے گھر چھوڑ کر چلے گئے ہیں، ان کا بہت سا سامان ملبے میں دب گیا ہے۔

گاؤں کے رہنے والے سریش یادو نے بتایا کہ منگل کی دوپہر کو اچانک ہجوم وہاں پہنچا اور جھونپڑیوں کو توڑنا شروع کر دیا۔ وہ جانتے تھے کہ مسلمان تارکین وطن یہاں رہتے ہیں۔ انہوں نے ’جئے شری رام‘ کے نعرے لگائے لیکن تلواریں اور لاٹھیاں لے لیں۔ غریبوں پر حملہ کرنے سے کیا فائدہ ہوگا؟ وہ بہرحال تعداد میں بہت کم تھے۔

یادو کو یقین ہے کہ 2024 کے لوک سبھا انتخابات کے پیش نظر سیاسی گروپوں نے فرقہ وارانہ کشیدگی کو ہوا دی ہے۔ یہ کون لوگ تھے جنہیں چھوڑنے پر مجبور کیا گیا؟ ان میں سے کچھ میوات سے تھے، کچھ یوپی سے، کچھ بہار سے تھے۔ ان کی گھریلو کمائی ماہانہ 8ہزار سے 10ہزارروپے سے زیادہ کچھ نہیں تھی۔ وہ برسوں سے یہاں رہ رہے ہیں۔ کچھ نے گھر میں کام کرنے والے کے طور پر کام کیا، کچھ نے کار کلینر کے طور پر، اور کچھ نے عجیب و غریب کام کرتے تھے۔انہوںنے کہا کہ لوگ سبھا انتخابات سے قبل اس طرح کے فسادات مزید ہونے کا خدشہ ہے۔

مسمار شدہ جھونپڑیاں ویران نظر آ رہی ہیں ۔ چمکدار بلندیوں سے گھرے ہوئے، یہ عارضی گھر ٹن اور ایسبیسٹوس کی چادروں سے بنے تھے۔ ’’دیکھو وہ کس حال میں رہتے تھے۔ پینے کا پانی نہیں ہے۔ نہ باتھ روم، نہ مناسب لائٹس۔ ان کے پاس بالکل کچھ نہیں تھا۔ پھر بھی ہجوم نے ان گھروں کو تباہ کردیا کیوں کہ یہاں مسلمان رہتے تھے۔

ایک اور سبزی فروش پنکو نے کہاکہ یہ لوگ یہاں کئی سالوں سے رہ رہے ہیں۔ ان کا نوح کے تشدد سے کوئی تعلق نہیں تھا۔ پھر بھی، وہ نشانہ بن گئے۔ ہجوم یہاں بدلہ لینے کے لیے آئے تھے


یادو اور پنکو دونوں نے مزید کہا کہ ہجوم نے گھروں اور دکانوں کو آگ لگانے سے پہلے لوٹ لیا۔ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ جس ڈھابے میں آگ لگادئی گئی ہے وہاں کیش کاؤنٹر خالی ہے۔ انہوں نے کچھ نہیں چھوڑا، یہاں تک کہ کرسیاں اور میزیں بھی چرا لیں ہیں۔

انہو ں نے بتایا کہ یہاں زیادہ تر دوسری ریاستوں سے مزدور کرنے کےلئے آنے والے رہتے تھے۔ان میں سے زیادہ تر مسلمان تارکین وطن اپنے خاندانوں کے ساتھ رہے، اور راتوں رات بھاگنے پر مجبور ہوئے۔

مہک کاٹن اسٹور کے منیجر محمد شاہد نے بتایا کہ میں خوف زدہ ہوکر اپنے گھروالوں کو لے کر سنبھل یوپی آگیا ہوں ۔شاہد نے کہا کہ انہیں کبھی اندازہ نہیں تھا کہ نوح کا تشدد ان پر بھی اثر انداز ہوگا۔ “فساد نوح میں ہوا جو بادشاہ پور سے 50 کلومیٹر دور ہے۔ ہم نے اس قسم کے سلوک کے مستحق نہیں تھے۔
“میں 2009 سے اسٹور کا انتظام کر رہا ہوں۔ میرے سب کے ساتھ دوستانہ تعلقات تھے۔ یہاں تک کہ پرویز، جو سڑک کے پار جوس کی دکان کا مالک تھا، محلے کے ہر فرد کے ساتھ دوستانہ تھا۔ پھر بھی، میں نے سنا ہے کہ بادشاہ پور کے کچھ لوگوں نے ہجوم کو ہماری دکانوں کی طرف لے کر گحا ۔ میں نے یہ بھی سنا ہے کہ میری دکانوں سے چیزیں چرانے والوں میں سے کچھ ایسے لوگ تھے جنہیں میں جانتا تھا۔

بادشاہ پور میں گزشتہ دو دنوں سے پولیس موجودہے مگرکشیدگی برقرار ہے۔ گاؤں کے وسط میں واقع پرانی مسجد کو تالا لگا دیا گیا ہے اس کے احاطے میں پولیس حفاظت کےلئے موجود ہے۔ چند مسلمان جو گاؤں کے رہنے والے تھے بھاگ گئے ہیں۔ تاہم گاؤں والوں نے کہا کہ ان میں سے کچھ اب بھی وہاں موجود ہیں لیکن انہوں نے اپنے گھروں کو بالکل بھی نہیں چھوڑا تھا، اور انہیں تالے لگا رکھے تھے۔ مسجد کے بالکل ساتھ ایک مندر بھی ہے۔

گاؤں کے بزرگوں نے دعویٰ کیا کہ بادشاہ پور کا کوئی بھی تشدد کا ذمہ دار نہیں ہے، ہجوم میں شامل ہر شخص باہر کا تھا۔ ہمارے یہاں کبھی بھی فرقہ وارانہ فساد نہیں ہوا۔ مسلمانوں کے گھر جو آپ دیکھ رہے ہیں۔یہ لوگ یہاں گزشتہ 200 سالوں سے رہ رہے ہیں۔ یہ پہلا موقع ہے جب ہم نے اس طرح کا واقعہ دیکھاہے۔‘

تاہم، ہجوم نے بادشاہ پور کے آس پاس کی جھونپڑیوں اور دکانوں کو ہی نشانہ نہیں بنایا۔ یہ گاؤں کے دو پرانے رہائشیوں کی ملکیت والی دو گوشت کی دکانوں کو نشانہ بنانے کے لیے گاؤں میں داخل ہوئے۔ گوشت کی دکانیں تباہ اور لوٹ مار کی گئیں، اس کے بعد ہی گائوں کے قدیم مسلمان باشندے بھی گاؤں چھوڑ گئے۔

گائوں کے رہائشی کی ملکیت میں گوشت کی دکان۔ تصویر: اجوئے آشیرواد مہاپرشتا

گاؤں کے ہندونوجوانوں نے تشدد کو جائز قرار دیتے ہوئے کہا کہ نوح میں مسلمانوں نے سب سے پہلے ہندوؤں کو مارا۔ یہاں جو کچھ ہوا وہ نوح کے تشدد کا ردعمل تھا،‘‘ ارون نے کہاکہ یہاں تک کہ اس کے آس پاس کے کچھ بزرگوں نے اسے روکنے کی کوشش کی۔

اسی طرح بادشاہ پور کے دو 15 سالہ لڑکے پرجوش نظر آئے کہ مسلمان تارکین وطن فرار ہو گئے ہیں۔ جن دکانوں پر حملہ کیا گیا وہ تمام ملاؤں کی ملکیت تھیں۔ ان کا یہاں سے تعلق نہیں تھا۔ اچھا ہوا کہ وہ چلے گئے۔اگر وہ نہیں جاتے تو ہم انہیں یہاں سے بھاگنے پر مجبور کردیتے

مسلمانوں کے خلاف ایک گہری فرقہ وارانہ عداوت
بادشاہ پور کے ہندوؤں میں یہ اتفاق ہے کہ ہجوم کے تشدد اور بعد میں مسلمانوں کے دوکانوں میں لوٹ مار سےگاؤں کی بدنامی ہوئی ہے۔اس کے باوجود مذہبی پولرائزیشن بہت گہرا ہے۔ تشدد کے بعد مختلف قسم کی افواہوں گرم ہے۔ بادشاہ پور میں تقریباً سبھی نے اس بارے میں بات کی کہ کس طرح بدھ کی صبح ایک مسلمان شخص نے گاؤں سے محض ایک کلومیٹر کے فاصلے پر واقع علاقے ماروتی کنج میں ایک ہندو دکاندار کو مبینہ طور پر قتل کر دیا۔

تاہم، پوچھ گچھ پر، دی وائر نے پایا کہ ایسا کوئی قتل کا واقعہ پیش نہیں آیا ہے ۔ لیکن بادشاہ پور کے رہائشیوں نے اس افواہ کو سچ مان لیا، اور اس سے مسلمانوں کے خلاف ان کی فرقہ وارانہ دشمنی مزید گہری ہوئی ہے۔

تقریباً دو کلومیٹر کے فاصلے پر، سیکٹر 70 کی ایک کچی بستی، جہاں مغربی بنگال کے مسلمان تارکین وطن رہتے ہیں، کو بھی اسی طرح ہندوتوا کے ہجوم نے تباہ اور لوٹ لیا۔ ان میں سے اکثر راتوں رات فرار ہو گئے۔ جو باقی رہ گئے ہیں، حکومتی اداروں کی طرف سے کسی یقین دہانی کی عدم موجودگی میں اپنی حفاظت کے لیے خوفزدہ ہیں۔

دریں اثنا، تماشائیوں نے بادشاہ پور میں ایک فیلڈ ڈے منایا گیاجس میں صحافی، سول سوسائٹی کے کارکنان گاؤں کا دورہ کر رہے تھے۔ ان میں سے بہت سے لوگ سے اس واقعے سے خوش نظر آرہے تھے۔ بادشاہ پور کے ایک آٹھ سالہ بچے نے دی وائر کو بتایا کہ “یہ ایک ایکشن فلم کی طرح محسوس ہوتا ہے۔

گروم گرام تجارتی مرکز میںتبدیل ہوگیا ہے۔اس کے پڑوس میں واقعے یہ بادشاہ پور گائوںجیسے دیہات محنت کش طبقے کے بے شمار تارکین وطن کا گھر بن گیا تھا جنہوں نے شہر کی تعمیر میں پردے کے پیچھے کام کیا۔ وہ روزی روٹی کمانے کے لیے اپنی عارضی جھونپڑیوں میں رہتے تھے۔مگر اب ان کے آشیانے اجاڑ دئیے گئے ہیں ۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین