Wednesday, June 12, 2024
homeاہم خبریںکلکتہ اور ہوڑہ کے بنگال کے شہری علاقوں میں بی جے پی...

کلکتہ اور ہوڑہ کے بنگال کے شہری علاقوں میں بی جے پی کی دبدبہ ۔دیہی اور مسلم حلقوں میں ترنمول کانگریس کا دبدبہ

انصاف نیوز آن لائن

لوک سبھا انتخابات میں بنگال کے شہری علاقوں میں کلی مقامات پر بی جے پی نے ترنمول کانگریس پر سبقت حاصل کی ہے۔ لوک سبھا انتخابات کے نتائج کا تجزیہ کرنے کے بعد یہ حقیقت سامنے آتی ہے کہ کئی میونسپلٹی علاقوں میں بی جے پی اور ترنمول کے درمیان فرق نمایاں ہے۔ بنگال کی 121 میونسپلٹیوں میں سے 69 میونسپل علاقوں میں بی جے پی امیدوار آگے تھے۔ جب کہ دھولیان اور بہرام پور میونسپلٹی میں کانگریس کو سبقت حاصل تھی۔ باقی 51 میں ترنمول آگی تھی۔

جب کہ دیہی علاقومیں میں ترنمول کانگریس کو حاکمیت حاصل تھی ۔تاہم شمالی بنگال کے کئی اضلاع اور جنوبی بنگال کے دو تین اضلاع کے دیہی علاقوں میں بی جے پی کو سبقت حاصل تھی ۔لوک سبھا انتخابات کے دوران ترنمول کانگریس کو بھی حکومت مخالف لہر کا سامنا تھا ۔ نوکریوں کی منسوخی سے لے کر کرپشن کے مختلف الزامات کی وجہ سے سیاسی حلقوں میں تجسس پیدا ہوگیا تھا لوک سبھا انتخابات پر اس کا کتنا اثر پڑے گا؟ مجموعی طور پر ترنمول کانگریس نے ریاست میں ووٹ اور سیٹ دونوں میں اضافہ کیا ہے۔ اس لحاظ سے بھرتیوں میں بدعنوانی یا متعلقہ مسائل کا کوئی اثر نہیں ہوا۔ لیکن گہرے تجزیہ سے پتہ چلتا ہے کہ میونسپلٹی علاقے میں ترنمول کی حمایت میں کمی آئی ہے۔ تاہم، دیہی علاقوں کی حمایت میں اضافے نے اس زخم کو ٹھیک کر دیا ہے۔

لوک سبھا انتخابات میں پارٹی کے لیے کام کرنے والے کچھ لیڈروں نے پہلے ہی اس معاملے کو پارٹی کی اعلیٰ سطح تک پہنچا دیا ہے۔ ان میں سے بہت سے لوگوں کے مطابق، بھرتیوں میں بدعنوانی، راشن بدعنوانی یا پارتھا چٹرجی کی گرل فرینڈ کے گھر سے بڑے پیمانے پر نقد برآمد ہونے سے گاؤں میں نہیں تو شہری علاقوں میںبرا اثر پڑا ہے۔ بہت سے دوسرے لوگوں کے مطابق یہ ووٹ لوک سبھا کا ووٹ ہے۔ ملک کی حکومت اور وزیر اعظم کے انتخاب کے لیے ووٹ۔ ان کے مطابق شہری ووٹروں کے ایک بڑے حصے نے نریندر مودی کو وزیر اعظم کے طور پر دیکھنے کے لیے ووٹ دیا ہے۔ ایسے میں لکشمی بھنڈار یا دیگر عوامی فلاحی اسکیموں کی اپیل ان کے لیے زیادہ کام نہیں کر پائی۔ وجہ کچھ بھی ہو، لوک سبھا انتخابات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ بی جے پی ریاست بھر میں 50 فیصد سے زیادہ میونسپل حلقوں میں آگے تھی ۔

فروری 2022 میں ریاست کی 121 میونسپلٹیوں میں پولنگ ہوئی تھی۔ نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ ترنمول کانگریس نے ندیا میں طاہر پور کو چھوڑ کر باقی تمام 120 میونسپلٹی جیت لی ہیں۔ طاہر پور سی پی ایم کے کنٹرول میں تھا۔ لیکن لوک سبھا انتخابات کے اس سروے سے پتہ چلتا ہے کہ حساب الٹ گیا ہے۔ بالورگھاٹ سے گھٹال، کھڑگپور سے بانسبریا میونسپلٹی علاقے میں بی جے پی آگے تھی ۔
سلی گوڑی، آسنسول، بدھان نگر کے بیشتر علاقوں میں بی جے پی آگے ہے۔ کلکتہ اور ہوڑہ میں ایک بار پھر ترنمول آگے ہے۔ کلکتہ کے 144 وارڈوں میں سے 45 پر بی جے پی آگے ہے۔ سی پی ایم دو وارڈوں میں آگے ہے۔ بی جے پی کے پاس کلکتہ میں ترنمول سے کئی میئر کونسل ممبران، بورو چیرمین کے وارڈوں میں زیادہ ووٹ ہیں۔ یہ شمالی کلکتہ کے ساتھ ساتھ جنوبی کلکتہ میں بھی ہے۔

کلکتہ میونسپل کونسل، راس بہاری سے ممبر اسمبلی اور جنوبی کلکتہ ترنمول کے ضلع صدر دیباشیس کمار کے اپنے وارڈ میں حکمراں پارٹی پیچھے رہی۔ شہری علاقوں میں ایسا کیوں ہوا؟ کولکاتا کے بارے میں بات کرتے ہوئے، دیباشیس نے کہاکہ اگر 2019 اور 2024 کے نتائج کا ساتھ ساتھ تجزیہ کیا جائے تو یہ دیکھا جائے گا کہ پانچ سال پہلے بھی کلکتہ کے لوک سبھا انتخابات میں ایسے ہی نتائج آئے تھے۔ لیکن یہ اسمبلی یا کارپوریشن کے انتخابات میں نہیں دیکھا گیا۔ پچھلی لوک سبھا میں کلکتہ کے وارڈ میں بی جے پی ووٹوں کی تعداد میں آگے تھی، اس بار یہ فرق بھی کم ہوا ہے۔ ان کے الفاظ میں، ’’لوک سبھا کا سیاق و سباق مختلف ہے۔ تو ایسا ہوتا ہے۔ لیکن یہ اسمبلی یا میونسپل انتخابات کے دوران الٹ جاتا ہے۔

آسنسول سیٹ گزشتہ لوک سبھا انتخابات میں بی جے پی نے جیتی تھی۔ اس کے بعد بابل سپریا نے ترنمول کانگریس میں شمولیت اختیار کی اور پارلیمنٹ کی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا۔ شتروگھن سنہا نے ضمنی انتخاب میں کامیابی حاصل کی۔ اس بار بھی وہ جیت گئے۔ لیکن آسنسول پور علاقے میں ترنمول کو کافی ووٹوں کا نقصان ہوا۔ آسنسول کے میئر اور بارابنی کے ایم ایل اے بدھن اپادھیائے نے کہاکہ ’’ہم ہار گئے۔ یہ ہماری ناکامی ہے۔ میں کوئی بہانہ نہیں بناؤں گا۔ ہمیں بہتر کرنا چاہیے تا۔ میں پیچھے کیوں رہا، ہمیں یہ معلوم کرنا ہوگا۔

ترنمول کانگریس نے اس مرتبہ بی جے پی سے ہگلی لوک سبھا سیٹ چھین لی ہے، لیکن بی جے پی بانسبڑیا اور چنچوڑا جیسے میونسپلٹی علاقے ترنمول سے آگے تھی۔ بانسبڑیامیونسپلٹی کے چیئرمین آدتیہ نیوگی نے کہا کہ میڈیا کی منفی تشہیر نے ہمیں نقصان پہنچایا ہے۔ شہر کے لوگ خبریں دیکھتے ہیں، خبریں پڑھتے ہیں۔ گاؤں کے لوگ نہیں پڑھتے۔ میڈیا کے ایک حصے نے جو پروپیگنڈہ کیا اس کا اثر ہوا ہے۔ نیز، ہمیں جوٹ مل علاقے میں غیر بنگالی ووٹ اور متوا ووٹ نہیں ملے۔” تاہم، آدتیہ کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ نتائج 2019 کے مقابلے بہتر ہیں۔

سیاسی تجزیہ نگاروں کے مطابق، شہری انتخابات میں بی جے پی ترنمول سے آگے کیوں تھی، اس کی وضاحت ایک یا دو عوامل سے نہیں کی جا سکتی۔ آسنسول کے بڑے علاقوں میں غیر بنگالی ہندو ووٹ بی جے پی کو گئے ہیں۔ بی جے پی 106 میں سے 70 وارڈوں پر آگے تھی۔ ایک بار پھر، ترنمول نے ہاوڑہ کارپوریشن کے کئی وارڈوں میں کامیابی حاصل کی ہے جہاں غیر بنگالی ہندو ووٹوں کی زیادتی ہے۔تاہم بیشتر عکاقے میں اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں کے ووٹ بی جے پی کو گئے ہیں ۔کوئی علاقائی تغیر نہیں ہے۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین