Wednesday, May 29, 2024
homeہندوستاناب دہلی کی خاتون ٹیچر نے اپنے مسلم طلبا کے ساتھ فرقہ...

اب دہلی کی خاتون ٹیچر نے اپنے مسلم طلبا کے ساتھ فرقہ وارانہ گالیاں دیں۔پولس نے کیس درج کیا

نئی دہلی (انصاف نیو ز آن لائن)
اترپردیش کے مظفر نگر کے بعد اب قومی راجدھانی نئی دہلی کے ایک اسکول میں مذہبی تعصب و نفرت میں مبتلا ایک استاذکے ذریعہ مسلم طلبا کو مذہبی بنیاد پر گالی دینے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔دہلی پولس نے اس معاملے مذکورہ استاذ کے خلاف مقدمہ درج کردیا ہے۔
23اگست کو چندریان کی کامیابی پر جشن کے دوران ٹیچر ہیماکلاٹی نے مسلم طلبا کے ساتھ گالی گلوج کی ۔طلباء کے والدین نے دہلی پولیس اور ڈائریکٹوریٹ آف ایجوکیشن سے رابطہ کیا تاکہ ٹیچر کے خلاف بچوں کے ساتھ بدسلوکی اور کلاس میں مذہبی گالیاں دینے کی شکایت کی جا سکے۔ طلباء اور ان کے اہل خانہ کے ایک گروپ نے اسکول کے باہر احتجاج کیا۔

ایک متاثر لڑکے کے والدنے بتایا کہ ٹیچر نے ہمارے بچوں کے ساتھ انتہائی بدتمیزی سے بات کی ۔ٹیچر نے کہا کہ آزادی کے بعد ملک کےلئے مسلمانوں نے کچھ بھی نہیں کیا ہے۔مسلمان برے ہیں ،ہندئوں کے مذہب کی توہین کرتے ہیں ،مسلمان اپنے مذہبی مقامات پر جانوروں کی کھال استعمال کرتے ہیں۔

پولیس نے کہا کہ انہوں نے ہیما گلاٹی کے خلاف تعزیرات ہند (آئی پی سی) کی دفعہ 153 اے (مذہب کی بنیاد پر مختلف گروہوں کے درمیان دشمنی کو فروغ دینا…)، 295 اے (جان بوجھ کر اور بدنیتی پر مبنی حرکتیں، جس کا مقصد کسی بھی طبقے کے مذہب کی توہین کرکے مذہبی جذبات کو مجروح کرنا تھا) کے تحت مقدمہ درج کیا ہے۔ یا مذہبی عقائد) اور 298 (مذہبی جذبات کو مجروح کرنے کے ارادے سے الفاظ وغیرہ کا بولنا)۔ انہوں نے کہا کہ ٹیچر کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے گی۔

ڈپٹی کمشنر آف پولیس (شاہدرہ) روہت مینا نے کہاکہ ’’ہمیں شکایت موصول ہوئی کہ ایک اسکول ٹیچر نے طلبا کے خلاف کچھ مذہبی الفاظ استعمال کیے ہیں۔ ہم نے معاملے کا نوٹس لیا ہے۔ ہم نے مناسب قانونی کارروائی کرنے کے لیے جوینائل ویلفیئر افسر، مشیروں کے ساتھ بات کی۔ ٹیچر کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔ دو یا تین ایسے طالب علم شکایت کا حصہ ہیں، اور ان سب کی کونسلنگ کی جائے گی۔

اسکول میں ایک اور طالب علم کی والدہ کوثر نے میڈیا کو بتایاکہ میرے دو بچے یہاں پڑھتے ہیں۔ یہ سن کر ہم سب چونک گئے۔ وہ ہمارے مذہب کے بارے میں کچھ جانے بغیر ایسی ہتک آمیز باتیں کیسے کہہ سکتی ہے؟ اس نے ہماری مذہبی کتابوں اور عبادت گاہوں پر تبصرہ کیا۔ ہمیں تکلیف پہنچی ہے۔ اگر استاد کو سزا نہیں دی جاتی ہے تو دوسرے اساتذہ کو بھی ایسا کرنے کی ترغیب ملے گی… ایسے استاد کا کوئی فائدہ نہیں جو طلباء کے درمیان اختلافات پیدا کرے۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ ٹیچر کوا سکول سے ہٹایا جائے۔ اسے کسی بھی اسکول میں نہیں پڑھانا چاہئے کیونکہ وہ جہاں بھی جائے گی وہی کرے گی۔

یہ واقعہ گزشتہ ہفتے اتر پردیش میں مظفر نگر اسکول کے متنازعہ واقعہ کے بعد پیش آیا۔ مظفر نگر کے ایک پرائیویٹ اسکول کی ایک ویڈیو سامنے آئی ہے، جس میں ایک خاتون ٹیچر نے مبینہ طور پر اپنے کلاس روم میں بچوں کو ایک ایک کر کے ایک طالب علم کو مارنے کی ہدایت کررہی ہیں اس کے مسلم عقیدے کا حوالہ دیتے ہوئے کہتی ہیں کہ مسلم بچے نہیں پڑھتے ہیں

ٹیچر، ترپتا تیاگی پر آئی پی سی کی دفعہ 323 (زخمی کرنا) اور 504 (امن کی خلاف ورزی پر اکسانے کے ارادے سے جان بوجھ کر توہین) کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ مظفر نگر پولس نے کھبا پور گاؤں کے پرائیویٹ اسکول کو سیل کر دیا۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین