Wednesday, May 29, 2024
homeدنیاروہنگیا نوجوان بنگلہ دیش کے خاردارکیمپوں سے نکل کرمستقبل کیلئے ترس رہے...

روہنگیا نوجوان بنگلہ دیش کے خاردارکیمپوں سے نکل کرمستقبل کیلئے ترس رہے ہیں

بنگلہ دیش کے کیمپوں میں 6برس گزارنے کے بعد روہنگیائی نوجوان اپنی زندگی اور اپنے بہتر مستقبل کےلئے آزادی کے طلب گا

سعدیہ رحمان
بنگلہ دیش میں نارویجن رفیوجی کونسل کے لیے کمیونیکیشن آفیسر

6سال گزرگئے جب دنیا نے700,000روہنگیا مسلمانوں کو میانمار سے بنگلہ دیش فرار ہوتے ہوئے دیکھا تھا۔ ان میں نصف کے قریب بچے اور نوجوان تھے۔ امید تھی کہ بنگلہ دیش میں ان کا ٹھکانہ مختصر مدت کےلئے ہوگا اور بہت ہی جلد وہ دوبارہ اپنے وطن واپس چلے جائیں گےمگر یہ طویل بحران میں تبدیل ہوگیا ہے۔بچپن میں بھاگ دوڑکرنے والے اب جوانی کی عمر کو پہنچ چکے ہیں۔ وہ جو نوعمر تھے اب بالغ ہو چکے ہیں۔

زیادہ تر بچوں کی طرح، وہ ڈاکٹر، انجینئر، اساتذہ، کھیلوں کے ستارے، اور فنکار بننے کی خواہش رکھتے ہیں ،جو ان کی حقیقت کے بالکل برعکس ہے۔ دنیا کے سب سے بڑے پناہ گزین کیمپ خارتار وں سے گھرا ہوا ہے ۔پناہ گزیں بچوں کی صرف رسمی تعلیم تک رسائی ہے۔کمانے یا پھر کیمپ کے اندر یا اس سے باہر آزادانہ نقل و حرکت کی اجازت نہیں ہے ۔

ایسے حالات میں، وہ جس قسم کے مستقبل کا خواب دیکھتے ہیں اس کی تعمیر کے لیے وہ کیا امید رکھ سکتے ہیں؟ ان کے لیے اپنی زندگی کو بہتر بنانے کی گنجائش نہیں ہے ۔، خواہ وہ تعلیم کے ذریعے ہو یا تنخواہ کے ذریعے۔

بہت سے نوجوان روہنگیا جن سے میں ان کیمپوں میں ملاقات کی وہ مجھے بتاتے ہیں کہ وہ دنیا کو بھولے ہوئے محسوس کرتے ہیں۔ وہ مجھے اپنے اور اپنی زندگی کے درمیان کی رکاوٹوں سے متلق بتاتے ہیں جو وہ اپنے لیے چاہتے ہیں ۔ مایوسی کے احساس سے دوچار ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ان کی آوازیں سنائی نہیں دیتی ہیں اور وہ خواب دیکھنے کا حق کھو چکے ہیں۔ بے بسی کا یہ احساس ان کی ذہنی صحت کو متاثر کررہا ہےپ۔

نارویجن رفیوجی کونسل (NRC) کے ذریعے 11 کیمپوں میں 317 پناہ گزین نوجوانوں اور نوعمروں کے 2022 کے سروے میں پتا چلا کہ جواب دہندگان میں سے 96 فیصد بے روزگار تھے اور وہ مسلسل بے چینی اور تناؤ کا شکار تھے۔

امین ایک نوجوان روہنگیا ہے جسے میں اچھی طرح جانتی ہوں۔ چھ سال پہلے، وہ اپنے آبائی ملک میں ہائی اسکول کا طالب علم تھا۔ اس نے یونیورسٹی جانے اور وکیل بننے کا خواب دیکھا تھا۔ پھر ایک دن، اس کا گاؤں جلا دیا گیا، اور اس کے رشتہ دار اس کی آنکھوں کے سامنے مارے گئے۔ خوفزدہ ہو کر، وہ اور اس کا خاندان 10 دن تک پیدل چل کر سرحد پار کر کے بنگلہ دیش پہنچنے میں کامیاب ہوگئے تھے۔

بہت سے دوسرے لوگوں کی طرح، امین نے فرض کیا کہ وہ صرف مختصر وقت کے لیے بنگلہ دیش میں رہے گا۔ لیکن یہاں آکر اس کو طویل مدتی بحران کا سامنا ہے۔ابہر گزرتے سال کے ساتھ، آہستہ آہستہ، اس کی وکیل بننے کی خواہش ختم ہوتی جا رہی ہے اور وہ خود کو مزید بے بس محسوس کر رہا ہے۔ اسے یہ بھی نہیں معلوم کہ وہ کبھی اپنی تعلیم دوبارہ شروع کر پائے گا۔

لڑکیوں اور نوجوان روہنگیا خواتین کی زندگی اس سے بھی زیادہ مشکل ہے۔ وہ اپنا زیادہ تر وقت بانس کے گنجان گھروں کی چار دیواری میں گزارتی ہیں۔ تعلیمی مراکز، محدود غیر رسمی تعلیم حاصل کرتے ہیں، خواتین اور لڑکیوں کے لیے ایک محفوظ جگہ کے طور پر کام کرتے ہیں۔ وہاں وہ پڑھنا سیکھ سکتے ہیں اور دوسرے نوجوانوں کے ساتھ دوستی اور تعلقات استوار کر سکتے ہیں۔ تاہم، بہت سی لڑکیوں کو ان کے گھر والوں نے پڑھنےکی اجازت نہیں دی ہے۔ اس کے بجائے، سماجی دباؤ اور حفاظتی خدشات کی وجہ سے لڑکیوں کے لیے 18 سال کی ہونے سے پہلے ہی شادی کرنا بہت عام ہے۔

پندرہ سالہ عائشہ نے مجھے بتایا کہ وہ بھاگنے سے پہلے اپنی زندگی کو یاد کرتی ہے۔ اس وقت، اسے اپنے دوستوں کے ساتھ ان کے گھر کے باہر باغ میں وقت گزارنے کی آزادی تھی۔ اب وہ کہتی ہیں کہ اس کے گھر میں بھیڑ ہے اور اس کے پاس بمشکل کوئی رازداری ہے۔ اسے سارا دن گھر پر گزارنا پڑتا ہے۔ یہ اسے جیل کی طرح محسوس ہوتا ہے۔

افسوس کہ امین اور عائشہ جیسی ہزاروں کہانیاں ہیں۔ توانائی اور جوش کی عمر میں، نوجوان روہنگیا اپنے دن سڑک کے کنارے کی دکانوں یا اپنی پناہ گاہوں کے اندر گزارتے ہیں۔ ان کی توانائی کا کوئی راستہ نہ ہونے کی وجہ سے وہ تھکے ہوئے اور بے چین ہو رہے ہیں۔

راشن کی رقم میں کٹوتی نے ان کی زندگی کو مزید مشکل بنادیا ہے۔روہنگیا کے نوجوان نسل بے روزگار اور تعلیم کی وجہ سے ذہنی ڈپریشن کے شکار ہورہے ہیں

ہم کب تک اس طرح امداد پر منحصر رہیں گے؟” ایک نوجوان پناہ گزین نے مجھ سے پوچھا۔ ہم مکمل طور پر امداد پر منحصر ہونے سے لطف اندوز نہیں ہوتے ہیں۔ یہ ہماری کام کرنے اور کمانے کی عمر ہے۔ راشن کی یہ تازہ ترین کٹوتی اس بات کا اشارہ ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ ہم اپنے پیسے خود کمانا شروع کر دیں۔

یہ ضروری ہے کہ عطیہ دہندگان اور فیصلہ ساز ان نوجوانوں کی بات سنیں۔ انہیں اپنے مستقبل کا تعین کرنے کا حق دیں۔

NRC کی طرف سے کئے گئے ایک حالیہ جائزے سے پتہ چلا ہے کہ روہنگیا نوجوان پیشہ ورانہ تربیت حاصل کرنے اور تکنیکی علم حاصل کرنے کے خواہشمند ہیں، جس سے انہیں اپنی اور اپنے خاندانوں کی کفالت کے لیے پیسہ کمانے میں مدد ملے گی۔

کچھ روہنگیا نوجوانوں کو سولر پینلز کی مرمت کے بارے میں تربیت دی جا رہی ہے جبکہ دیگر کو ٹیلرنگ کی تربیت دی جا رہی ہے۔ اس تربیت کے ساتھ ساتھ، نوجوانوں کو اب اپنے لیے روزی کمانے کے لیے اپنی نئی مہارتوں کو استعمال کرنے کے مواقع کی ضرورت ہے۔ اور ایسا کرنے کے لیے عطیہ دہندگان، حکومتوں اور نجی اداروں کو اپنی جیبوں میں ہاتھ ڈالنا چاہیے اور ان اقدامات میں مزید سرمایہ کاری کرنی چاہیے۔

موقع ملنے پر یہ نوجوان اپنی برادری اور بنگلہ دیش کے لیے ایک بہت بڑا اثاثہ ثابت ہوں گے۔ لیکن حکومت اور ڈونر کمیونٹی کو ٹولز فراہم کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے۔ صرف اسی طریقے سے نوجوان روہنگیا کو اپنے مستقبل کی ذمہ داری سنبھالنے کا حقیقی موقع مل سکتا ہے۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین