Wednesday, May 29, 2024
homeاہم خبریںجے این یو کیمپس میں احتجاج پر پابندی، حکم نہ ماننے پر...

جے این یو کیمپس میں احتجاج پر پابندی، حکم نہ ماننے پر ہزاروں روپے کا جرمانہ، طلبہ کو یونیورسٹی سے نکال دیا جائے گا

جے این یو طلبہ یونین نے یونیورسٹی انتظامیہ سے چیف پراکٹر کے دفتر کے نئے حکم نامے کو فوری اثر سے منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اس پر احتجاج کے لیے جمعرات کو اجلاس طلب کیا گیا ہے

نئی دہلی: دہلی سمیت ملک اور دنیا میں مشہور جواہر لال نہرو یونیورسٹی انتظامیہ نے طلباء کے روزانہ احتجاج کو لے کر بڑا فیصلہ لیا ہے۔ جے این یو انتظامیہ تعلیمی عمارتوں کے 100 میٹر کے اندر احتجاج کرنے اور دیواروں پر پوسٹر لگانے پر 20 ہزار روپے تک کا جرمانہ عائد کر سکتی ہے اور اگر معاملہ سنگین ہے تو اسے یونیورسٹی سے نکالنے تک کی سزا بھی دی جا سکتی ہے۔ اس کے علاوہ جے این یو کے نئے حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ کسی بھی ملک مخالف سرگرمیوں کے لیے طلبہ کو 10 ہزار روپے کا جرمانہ ادا کرنا پڑ سکتا ہے۔

جے این یو کا نیا حکم یونیورسٹی کے مختلف اسکولوں کی تعلیمی عمارتوں پر لاگو ہوتا ہے۔ کلاس رومز اور لیبارٹریز کے علاوہ نئے قوانین میں چیئرپرسنز، ڈینز اور دیگر اہم عہدیداروں کے دفاتر بھی شامل ہیں۔ جے این یو انتظامیہ نے یہ فیصلہ تشدد اور جھڑپوں کو روکنے کے لیے لیا ہے۔

پہلے جے این یو کے انتظامی بلاک کے 100 میٹر کے اندر احتجاج ہوا کرتا تھا لیکن دہلی ہائی کورٹ کے حکم کے بعد ان علاقوں میں احتجاج پر پابندی لگا دی گئی۔ نئے قوانین کے مطابق کسی طالب علم پر جسمانی تشدد، کسی دوسرے طالب علم، ملازم یا فیکلٹی ممبر کے ساتھ بدسلوکی یا مار پیٹ کرنے پر 50 ہزار روپے تک جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ چیف پراکٹر آفس کی جانب سے جاری کردہ حکم نامے کے مطابق کسی بھی مذہب، ذات یا برادری یا عدم برداشت یا ملک مخالف سرگرمی پر 10 ہزار روپے جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ توہین آمیز مذہبی، فرقہ وارانہ، ذات پات یا ملک مخالف تبصروں پر مشتمل پوسٹرز یا پمفلٹ کی پرنٹنگ، اشاعت اور تشہیر یا چسپاں کرنے کے نتیجے میں داخلے پر پابندی ہوگی۔

اگر کوئی طالب علم بھوک ہڑتال، دھرنا اور دیگر سرگرمیوں میں ملوث پایا گیا تو اسے یا تو 20 ہزار روپے جرمانہ یا دو ماہ کے لیے ہاسٹل سے نکال دیا جائے گا۔ زبردستی محاصرہ کرنے، دھرنا دینے یا یونیورسٹی کے کام میں خلل ڈالنے یا تشدد بھڑکانے کے کسی بھی عمل کو بھی سزا دی جائے گی۔ اگر کسی طالب علم کو پانچ یا اس سے زیادہ بار جرمانہ کیا گیا ہے تو اسے اس کی پڑھائی کے دوران جے این یو سے نکال دیا جائے گا۔ مزید برآں، اگر کوئی طالب علم ممنوعہ سرگرمیوں میں ملوث ہونے کا قصوروار پایا جاتا ہے، تو اسے اگلے سمسٹر کے لیے رجسٹر کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ کسی بھی طالب علم کے خلاف جھوٹا الزام یونیورسٹی سے نکالنے کا باعث بن سکتا ہے۔

جے این یو طلبہ یونین نے جے این یو انتظامیہ کے اس حکم کی مخالفت کی ہے۔ طلبہ یونین کے رہنماؤں کا کہنا ہے کہ یہ کیمپس میں اختلاف کو دبانے کی کوشش ہے۔ جے این یو ایس یو نے اسے واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ یونیورسٹی انتظامیہ چیف پراکٹر آفس کا نیا حکم نامہ فوری طور پر منسوخ کرے۔ اس کی مخالفت میں جے این یو طلبہ یونین نے جمعرات کو میٹنگ بھی بلائی ہے۔

متعلقہ خبریں

تازہ ترین